Panama Case Ka Faisla Ho Gaya

3

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے پاناما لیکس کے معاملے پر وزیراعظم نواز شریف کے خلاف دائر درخواستوں پر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) بنانے کا حکم دے دیا۔

جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے لارجر بینچ نے کورٹ روم نمبر 1 میں پاناما لیکس کے معاملے پر آئینی درخواستوں کا فیصلہ سنایا، جو رواں برس 23 فروری کو محفوظ کیا گیا تھا۔

فیصلہ 540 صفحات پر مشتمل ہے، جسے جسٹس اعجاز اسلم خان نے تحریر کیا۔

فیصلے پر ججز کی رائے تقسیم ہے، 3 ججز ایک طرف جبکہ 2 ججز جسٹس آصف سعید کھوسہ اور جسٹس گلزار احمد خان نے اختلافی نوٹ لکھا۔

فیصلے کے مطابق وزیراعظم نواز شریف اور ان کے صاحبزادوں حسن اور حسین نواز کو جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونے کا حکم دیتے ہوئے ہدایت کی گئی کہ جے آئی ٹی ہر 2 ہفتے بعد سپریم کورٹ بینچ کے سامنے اپنی رپورٹ پیش کرے۔

جے آئی ٹی میں فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے)، قومی احتساب بیورو (نیب)، اسٹیٹ بینک آف پاکستان اور ملٹری انٹیلی جنس (ایم آئی) کا نمائندہ شامل کیا جائے، جو 2 ماہ میں اپنی تحقیقات مکمل کرے گی۔

اپنے فیصلے میں سپریم کورٹ کا کہنا تھا کہ ڈائریکٹر جنرل (ڈی جی) فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) وائٹ کالر کرائم کی تحقیقات میں ناکام رہے۔

لیگی رہنماؤں کا ‘جیت’ کا اعلان

پاناما کیس کا فیصلہ آنے کے بعد عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں نے فیصلے کو اپنی ‘جیت’ قرار دیتے ہوئے ‘گو عمران گو’ کے نعرے لگائے۔

وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا کہ اللہ کا جتنا شکر ادا کریں وہ کم ہے، ہم سرخرو ہوئے ہیں، عدالت عظمیٰ نے فیصلہ دیا ہے، مزید تحقیقات کی جائیں جبکہ یہی بات 6 ماہ قبل خود وزیراعظم نواز شریف نے بھی کہی تھی۔

انہوں نے کہا کہ مخالفین نے جو شواہد پیش کیے، وہ ناکافی تھے، ان کی مزید تحقیقات کی ضرورت ہے۔

دوسری جانب وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ جے آئی ٹی کے ساتھ مکمل تعاون اور عدالتی فیصلے پر عمل کیا جائے گا۔

سعد رفیق نے مزید کہا کہ آج ثابت ہوگیا کہ ‘وزیراعظم صادق بھی ہیں اور امین بھی’۔

Details In English

The Supreme Court on Thursday gave a split judgement on the highly anticipated Panama Papers case, issuing an order for the formation of Joint Investigation Team (JIT) to probe how the Sharif family transferred money to Qatar, according to media reports.

Defence Minister Khawaja Asif told reporters outside the apex court that the verdict was split 3-2. “They have said what the PM already said in his letter ─ that a commission should be constituted to investigate the matter,” he said.

“We are ready for all kinds of investigation,” Asif said. “It has been established today that any evidence or sacrifices given by our opponents in the SC were not enough. We have succeeded.”

A five-judge bench, comprising Justice Asif Saeed Khosa, Justice Gulzar Ahmed, Justice Ejaz Afzal Khan, Justice Azmat Saeed and Justice Ijazul Ahsan, had examined arguments presented by the Pakistan Tehreek-i-Insaf (PTI), the Jamaat-i-Islami (JI), the Watan Party and the All Pakistan Muslim League, who framed the case out of court as a campaign against corruption.

Justice Asif Saeed Khosa began announcing the final verdict in the case against Prime Minister Nawaz Sharif and his family at Courtroom 1 at the apex court. Justice Ejaz Afzal authored the 540-page verdict, according to TV reports.

The final verdict is split 3-2 among the bench, DawnNews reported, with two dissenting notes in the judgement by Justice Khosa and Justice Gulzar. The two judges ruled against PM Nawaz Sharif, whereas the other three were in favour of forming a JIT.

Justice Khosa asserted that the Federal Investigation Agency and National Accountability Bureau were unsuccessful in playing their role effectively.

The JIT is to include officials NAB, FIA, Securities and Exchange Commission of Pakistan, Inter-Services Intelligence and Military Intelligence, the bench said, and will be led by a director-general level FIA officer.

A special bench will examine the case under Section 184/3 of the Constitution.

A letter from a Qatari royal submitted to court as evidence by Sharif’s lawyers was dismissed by the bench, which said that the transfer of money to Qatar must be examined by the court.

Prime Minister Nawaz Sharif, Maryam Nawaz, Hasan Nawaz, Hussain Nawaz, retired Capt Muhammad Safdar (the PM’s son-in-law) and Finance Minister Ishaq Dar are the respondents in the case.

About author
Profile photo of admin2

Your email address will not be published. Required fields are marked *