دعوت میں جائیں مگر اس طرح۔ ۔ ۔

دعوت میں جائیں مگر اس طرح۔ ۔ ۔

105 views

دعوت میں جائیں مگر اس طرح۔ ۔ ۔

تقافت کا تعلق کسی بھی ملک یا دور سے ہو، انسان، انسان سے ملنے میں خوشی محسوس کرتا ہے اور مل بیٹھنے کے بہانے ڈھونڈتا ہے، اسی وجہ سے مشرق ہو یا مغرب دوست احباب کو دعوت پر مدعو کرنا روایت رہی ہے، آیئے جانتے ہیں دعوت میں جانے کے کچھ اصول جن سے ہم لطف دوبالا کر سکتے ہیں۔

دعوت کا جواب ٹال مٹول سے نہ دیں۔ ۔ ۔

اس سے مہمان کو دعوت کی تیاری میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ ہمارے ہاں عموما دیکھا گیا ہے کہ آٹھ دس لوگوں کی مختصر دعوت میں بھی ایک دو مہمان یا جوڈے بغیر اطلاع کےغائب ہوجاتے ہیں جس سے ایک طرف تقریب کا لطف ادھورا رہ جاتا ہے دوسری جانب میزبان بھی پورا وقت منتظر رہتا ہے کہ شاید ان کے دوست یا احباب اب پہنچے کہ تب، اوران کے حصے کا پکایا ہوا کھانا ضائع ہوجاتا ہے وہ الگ نقصان، اس لئے مہمان پر لازم ہے کہ وہ اپنے دعوت میں شریک نہ ہونے کی اطلاع پہلے سے دے یا ایمرجنسی کی صورت میں بھی مہمان کو ضرور آگاہ کر دے، اس سے آئندہ کے لئے تعلقات کی بحالی میں بھی مدد ملے گی۔

gdhgh

دوست کے گھر کھانے کی دعوت، ایک تحفہ تو بنتا ہے۔

ضروری نہیں کی تحفہ بہت قیمتی ہو، چند پھولوں پر مشتمل ایک گلدستہ، ایک کیک یا میٹھے میں کچھ، موسم کے کچھ پھل، مہمان یا ان کے بچوں کے لئے ان کے پسند کی چاکلیٹ، یا کچھ بھی۔ ۔ کیونکہ تحائف دینے سے محبتیں بڑھتیں ہیں۔

Group of friends and family dining overhead view

لطف لیجیئے، دعوت کو بوجھ سمجھ کر نمٹانے کی کوشش نہ کریں۔

یہ موقع روز روز نہیں آتے، اپنوں کے ساتھ مل بیٹھنا ذہن و دل کو نئی جلا بخشتا ہے، روزمرہ کے کام کاج، نوکری، کاروبار اور دیگر قسم کی پریشانیوں سے نکل کر اگر چند گھنٹے آپس میں مل بیٹھنے کا موقع مل رہا ہے تو اسے نعمت جانئے اورخوب جی بھر کر لطف لیجیئے، وہ قہقہے جو نجانے کتنے دنوں سے ہنسنا بھول گئے ہیں انہیں کھلی اجازت دے دیجئے۔ اس طرح آپ اگلے دن سے ایک خوشگوار دن کا آغاز زیادہ مثبت طور کر سکیں گے

fgfdgfdg

موبائل نامی ‘دشمن محفل’ چیز سے پرہیز کیجئے۔

یقین جانئے یہ موبائل اکثر اوقات ہمارے سارے خوبصورت لمحے ضائع کردیتا ہے، ہمیں ہماری محفل، دوست احباب، فیملی، سب سے محروم رکھتا ہے۔ ہم چاہتے ہیں کہ آپ جس محفل میں شریک ہیں اس سے لطف اندوز ہوں، وہاں پر مدعو مہمانوں نے ملیں، کچھ اپنی کہیں کچھ ان کی سنیں، کچھ گلے شکوے، کچھ زندہ باتیں کریں اور اس مشین سے دور رہیں کم از کم اس وقت تک جب تک بے حد ضروری نہ ہوجائے۔ خاص طور پر کھانا کھاتے وقت موبائل کا استعمال بالکل نہ کریں، کیونکہ اسطرح آپ کھانے کا درست لطف لے پائیں گے نہ اس سے انصاف کر پائیں گے۔ محفل میں موبائل کا مستقل استعمال اپکے اردگرد بیٹھے لوگوں کو آپ کی نظر میں غیر اہم ہونے کا احساس دلائے گا، جو کہ اخلاقی حوالے سے مناسب نہیں۔

دسترخوان اور کھانے کے آداب پر بھی توجہ دیجیئے۔

ایک ہی دسترخوان پر کھانا کھانے کے دوران اکثر ایسا ہوتا ہے کہ قریب بیٹھے ہوئے افراد کا گلاس اور چمچ یا دوسرے برتن آپس میں مکس ہوجاتے ہیں، جس میں احتیاط برتنے کی ضرورت ہے تاکہ آپ کی وجہ سے کسی کو زحمت نہ ہو۔

ghfdghgfh

سب کے ساتھ کھانا شروع کریں۔

مانا کہ آپ کو بے حد بھوک لگی ہے مگر آپ کی ٹیبل پر بیٹھے ہوئے تمام افراد جب تک کھانا نہیں نکال لیتے تب تک آپ چمچ اٹھانے کی زحمت نہ کریں بلکہ نہایت صبر کے ساٹح تمام افراد کو کھانا سرو ہونے کا انتظار کریں۔

دوسروں کو کراہیت سے بچائیں۔

کھانے کی میز پر توٹھ پک یا فلاس استعمال نہ کریں، یہ دوسرے لوگوں کے لئے کراہیت کا سبب بن سکتا ہے، اور آپ کو بے ادب ثابت کرنے کے لئے یہ حرکت کافی رہے گی۔ اگرآپ نے زیادہ کھالیا ہے یا  آپ کوکھانے کے بعد بار بار ڈکار آنے جیسی علامات میں سے کسی ایک کی شکایت ہے تو بہتر ہے کہ اٹھ کر کچھ دیر کے لئے ٹیرس یا کھلی جگہ کا رخ کر لیں اور پانچ دس منٹ چہل قدمی کر کے دوبارہ محفل کی جان بن جائیں۔

آپ کھانا کھا چکے ہیں۔

اگر ایسا ہے تو اپنی ٹیبل پر بچھی اپنے سامنے کی نیپکن لپیٹ کر اپنے بائیں جانب رکھ دیجئے، یہ کھانے کے آداب کا حصہ ہے اور آپ کی جانب سے کھانے کی تعظیم کا اشارہ بھی۔

 

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *