o 1

نیند پھر رات بھر کیوں نہیں آتی۔ ۔ 

1186 views

نیند پھر رات بھر کیوں نہیں آتی۔ ۔

نیند اور بیداری، سونا اور جاگنا صرف انسان نہیں بلکہ ہر جاندار کی زندگی کی بنیادی ضرورت ہے۔

 ہر بیداری کے بعد نیند لینا جسم نامی مشینری کو چارج کرنے کا کام کرتا ہے۔ یہ روٹین اگر بگڑ جائے تو جسم میں خرابی یا بگاڑ کی کیفیت فوری طور پر ظاہر ہونا شروع ہوجاتی ہیں۔

اکثر افراد زیادہ سونے کو صحت مندانہ طرزعمل سمجھتے ہیں جبکہ یہ بالکل درست نہیں ہے، نیند کی کمی ہو یا ذیادتی دونوں ہی صحت کے لئے مضراور تباہ کن ہیں۔

 تحقیق سے ثابت ہے کہ انسان کے علاوہ تقریبا تمام مخلوق چرند پرند پیڑ پودے اپنے وقت پر سوتے اور جاگتے ہیں۔ صرف انسان اس حوالے سے مسائل کا شکار ہے جسکی وجہ انسانوں کے بدلتے ہوئے روز و شب و دیگر معمولات زندگی ہیں۔

ہر جسم میں نیند پوری کرنے کی صلاحیت مختلف ہوتی ہے، کچھ لوگ چار، کچھ چھ، کچھ آٹھ، کچھ دس یا بارہ گھنٹوں میں اپنی نیند پوری کرتے ہیں جبکہ بعض نیند لینے کے بعد بھی فریش نہیں ہوتے جس سے جسم میں کمزوری، تھکاوٹ اور بے چینی رہتی ہے۔ آئیے جانتے ہیں کچھ ایسی تدبیریں جن سے نیند کو بہتر بنانے میں مدد مل سکتی ہے۔

وقت مقرر کریں، معمول بنائیں

انسانی جسم میں ایک بایولوجیکل کلاک (حیاتیاتی گھڑی ) ہوتی ہے، جس کے مطابق ہمارا جسم ہمیں سونے جاگنے کی جانب راغب کرتاہے، ہمارے معمول کے ٹائم پر ہمیں جگانے کی کوشش کرتا ہے اور سونے کے وقت پر نیند آنے کے اشارے دیتا ہے، بہتر ہے کہ اس گھڑی کو فالو کیا جائے اور سونے اور جاگنے کے وقت کو معمول بنایا جائےجس کیلئے رات کا وقت سب سے بہتر ہے۔ جلد سونے اور جلد اٹھنے کا معمول بنائیں گے تو جسم اور دماغ خود بخود چست ہوں گے، صلاحیت بڑھے گی، کارکردگی بہتر ہوگی اور فطری نیند ملے گی کیونکہ قدرت کی طرف سے رات سکون کیلئے ہی بنائی گئی ہے، غلط اوقات میں سونے سے پرہیز کریں۔ رات جلدی سوئیں تاکہ صبح جلدی اُٹھا جاسکے۔

ترک کردیں۔

اچھی نیند اور صحت مند بیداری کے لئے ضروری کے کہ کچھ باتوں اور عادتوں کو ترک کردیا جائے جیسے۔ ۔

* سونے کے مقررہ وقت سے کم از کم دو تین گھنٹے پہلے چائے اور کافی پینے سے گریز کریں،چائےاور کافی میں موجود کیفین کا استعمال عموما نیند بھگانے کے لئے کیا جاتا ہے۔ اگر سونے سے فورا پہلے انکا استعمال کیا جائے تو بے خوابی کا سامنا ہوسکتا ہے۔

* نیند اور رات کے کھانے میں وقفہ کریں۔

سونے سے فورا پہلے رات کا کھانا کھانا بھی صحت کے لئے سخت مضر ہے،سینے میں جلن اور گیس کی وجہ سے ناصرف دوران نیند مسائل ہوتے ہیں،اٹھنے کے بعد تھکاوٹ کا احساس ہوتا ہے بلکہ خواب بھی نہایت بھیانک آتے ہیں۔

* پریشان خیالی سے گریز کریں۔

سونے سے قبل دن بھر کےمعاملات کو اپنے آرام دہ بستر سے دور رکھیں،تمام پریچان کردینے والے خیالات کو ذہن سے جھتک دیں اور گہری گہری سانس لیکر سکون حاصل کرنے کی کوشش کریں، خود کو پرسکون کریں اور سونے کی کوشش ہرگز نہ کریں،صرف سکون سے لیٹ کر اپنے اعصاب اور جسم کو ڈھیلا چھور دیں۔

خیال رکھیں۔

کچھ باتوں کو ترک کرنے سے آپ کی نیند بہتر ہوسکتی ہے،یہ آپ نے اپر پڑھا،اب آتے ہیں ان باتوں کی جانب جنہیں اپنا کر نیند کو مزید بہتر بنایا جاسکتا ہے۔

* آرام دہ بستر۔

آرام دہ بستر، خاص کر ایسا جس پر سونے کے آپ عادی ہوں ،ایسے ہی بستر کا انتخاب کیجئے تاکہ اس بستر پر لیٹ کر خواب خرگوش کے مزے لے سکیں۔

* غیر ضروری روشنیاں نیند میں خلل کا باعث۔

 کمرے میں تیز روشنی سے دماغ ہمیں باور کرواتاہے کہ ابھی سونے کا ٹائم نہیں ہوا۔ اسی لیے نہ صرف کمرے کی روشنی مدھم کرلیں ، بلکہ اسمارٹ فون، لیپ ٹاپ ، ٹیبلٹ ، اور ٹی وی کو بھی اپنی آنکھوں سے دور کرلیں، تاکہ آپ کا دماغ نیند کی وادیوں میں جانے کیلئے تیار ہو جائے۔

* آرام دہ اور ہلکے کپڑوں کا انتخاب کریں۔

سونے کیلئے ہلکا پھلکا لباس پہنیں، تکیے کو سرکے نیچے اس انداز میں رکھیں کہ آپ کو آرام محسوس ہو۔ کمرے کا درجہ حرارت ایسا ہونا چاہیے جس میں آپ سکون محسوس کریں۔

* خود کو تروتازہ کریں۔

دفاتر، امور خانہ داری یا کسی بھی نوعیت کے کاموں اور دیگر کاروباری معاملات میں پسینہ دھول مٹی یا سن اسکرین، میک اپ یا ڈیوڈرنٹ لگاتے ہیں، جو دھوپ ، پسینے کی وجہ سے جِلد میں سرایت کرنے لگتا ہے۔ سونے سے قبل نیم گرم پانی سے نہالیا جائے تو یہ ساری چیزیں صاف ہو جاتی ہیں اور جلد پر ہونے والی بے چینی اور بے سکونی دور ہو جاتی ہےاوراچھی نیند آتی ہے۔

* ہلکی چہل قدمی۔

اپنے قریبی کسی بھی جگہ چہل قدمی کریں اور تازہ ہوا کو اپنے اندر جذب کریں،اس دوران قدرت کو اپنے قریب رکھیں اور کسی قسم کا اسمارٹ فون اور گیجٹ وغیرہ نہ لے کرجائیں۔ قدرتی ماحول میں رہنے سے آپ کی حیاتیاتی گھڑی کا وقت بھی ٹھیک ہونے کا موقع بڑھ جاتاہے۔

*  صبح کی شفق آپ کو جگا سکتی ہے۔

موسم گرم میں سورج جلد نکل آتاہے، اس لیے آنکھ بھی جلد کھل جاتی ہے، جس پر جھنجلانے سے بہتر ہے کہ صبح کی روشنی کا فائدہ اٹھائیں اور سورج کی تمازت کو اپنے اندر جذب کریں۔ کھڑکی سے آتی دھوپ میں بیٹھ کر کافی پی لیں۔ یہ عادت کم سے کم اپنے چھوٹے اور ٹین ایج بچوں میں ضرور ڈالیں، صبح کی تازہ دم دھوپ ہڈیوں اور جسمانی افعال کیلئے ضروری ہوتی ہے۔ وہ جلدی اٹھیں گے تو رات جلد سونے کیلئے بسترپر ہوں گے۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *