اٹھارہویں ترمیم ختم کی تو، ایک لات مار کر حکومت گرا دوں گا، بلاول

اٹھارہویں ترمیم ختم کی تو، ایک لات مار کر حکومت گرا دوں گا، بلاول

132 views

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے خبردار کیا ہے کہ اگر 18 ویں ترمیم کو ختم کرنے کی کوشش کی گئی تو ایک لات مار کر حکومت کو ختم کر دوں گا۔

ذوالفقار علی بھٹو کی چالیسویں برسی پر خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ یہ کیا سمجھتے ہیں کہ نیب گردی

کے ذریعے بی بی شہید کا بیٹا ڈر جائے گا؟ ہم ظلم کی ہر طاقت سے ٹکرائیں گے۔

شہیدوں کی زمین پر وعدہ کرتا ہوں کہ کبھی عوام کو مایوس نہیں کرونگا۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ آج کے دن پاکستان کے عوام کی امیدوں کا قتل ہوا

آئین پاکستان کے خالق کا خون ہوا، آج کا دن سوال پوچھ رہا ہے کہ بتاؤ عوام کے محافظ کو قتل کیوں کیا گیا؟

ان کی کی موت کے پروانے پر دستخط کرنے والے کون تھے، صدرپاکستان نے 8 سال پہلے

اس ملک کی سب سے بڑی عدالت میں درخواست کی تھی، بھٹوز کیوں قتل ہوتے ہیں

اس کا جواب خون کا حساب کون دے گا، جوتاریخ سے سبق نہیں سیکھتے، انھیں تاریخ پھر سبق سکھاتی ہے

1971 کی جنگ کے بعد شہید ذوالفقار بھٹو کو بچا کچا پاکستان ملا، 1972 میں شہید ذوالفقار بھٹو نے نیوکلیئر پروگرام

کی بنیاد رکھی، 1974 میں بھارت نے بم دھماکا کیا، 1978 میں پاکستان کا نیوکلیئر پروگرام مکمل ہوچکا تھا

آج بھارت کی آنکھ میں آنکھ ڈال کر بات کرتے ہو، تو یہ ذوالفقاربھٹو کی وجہ سے ہے

کیا ذوالفقاربھٹو کو ملک کا دفاع مضبوط بنانے کی سزا دی گئی

ان کا کہنا تھا کہ ہمارا نظریہ نہیں بدلا لیکن تمھارا بیانیہ بدلتا رہتا ہے،

آئین پر حملہ کرنے کی کوشش کی گئی تو تمھارا حشر بھی آمروں جیسا ہوگا۔

وزیراعظم عمران خان کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ

گھوٹکی میں آکر کہتے ہیں کہ 18 ویں ترمیم سے وفاق دیوالیہ ہوگیا۔

بلاول نے عوام کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ان کی اصلیت پہچانو

یہ وہ لوگ ہیں جو ذوالفقار علی بھٹو شہید کے آئین اور آپ کے حقوق کے دشمن ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم اس ملک کو واپس وین یونٹ نہیں بننے دیں گے

تم کوشش کر لو ہم تمہارے سامنے دیوار بن کر کھڑے ہو جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ تم 18ویں ترمیم کو ختم کرنے کی کوشش کرو

ون یونٹ کی کوشش کرو میں ایک لات مار کر ختم کر دوں گا۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ خان گھوٹکی آکر اور سندھ کا نمک کھا کر کہتا ہے کہ سندھ کی ضرورت نہیں

تم کون ہو کٹھ پتلی؟ سندھ کو تمہارے ضرورت نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم جانتے ہیں اسے سندھ نہیں سندھ کے وسائل چاہئیں

وہ آج بھی سندھ کے 120 ارب روپے پر سانپ بن کر بیٹھا ہے

این ایف سی ایوارڈ میں کمی کرکے صوبوں کے حقوق مارنا چاہتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے 18ویں ترمیم کے ذریعے چاروں صوبوں کو مضبوط کیا

لیکن بے نامی وزیراعظم کو یہ بات سمجھ نہیں آتی کہ صوبوں کے عوام کے فیصلوں سے وفاق مضوط ہوتا ہے۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ آٹا، دال ، چاول ہر چیز عام آدمی کی خرید سے باہر ہے

صحت کا انصاف کہتا ہے کہ بیمار ہو، دوا نہیں خرید سکتے، تو مر جاؤ، عوام 20،20ہزار کے

بجلی بل دیکھ کر بے حال ہے، ان کا وزیرخزانہ کہتا ہے ان کی معاشی پالیسی دیکھ کر چیخیں نکلیں گی، یہ معاشی دہشت گرد ہیں۔

چیئرمین پیپلزپارٹی نے کہا کہ انھیں حقیقت بتاتے ہیں، تو ڈرانے کے لئے نیب گردی شروع کردی جاتی ہے

یہ احتساب نہیں سیاسی انتقام ہے، یہ پولیٹیکل انجینئرنگ ہے، یہ جمہوریت نہیں سیاسی انتقام ہے

یہ پولیٹیکل انجینئرنگ ہے،6 ماہ کیس چلنے کےباوجود مجھے عدالت کے سامنے اپنا مؤقف دینے کا موقع نہیں ملا

معزز عدالت بھی جانتی ہے کہ یہ کیسز جھوٹے ہیں، اعلیٰ عدلیہ کے چیف جسٹس نے کہا میرا نام رپورٹ میں غلط شائع ہے۔

احتساب کے نام پر قوم کو بےقوف بنانے کی کوشش نہ کرو، احتساب کے نام پر پولیٹیکل انجیئرنگ مت کرو

میری باتیں اس حکومت کو برداشت نہیں ہوتیں، میں نے تین وزیروں کو ہٹانے کا مطالبہ کیا۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *