کراچی میں بارش کے ناقص انتظامات: میئر وسیم اختر اور سندھ حکومت  آمنے سامنے

کراچی میں بارش کے ناقص انتظامات: میئر وسیم اختر اور سندھ حکومت آمنے سامنے

82 views

کراچی میں بارش کے بعد ایک بار پھر انتظامیہ کی لاپرواہی سامنے آگئی جبکہ  میئر وسیم اختر اور سندھ حکومت پھر آمنے سامنے آگئے دونوں نے ذمے داری ایک دوسرے پر ڈال دی۔

کراچی میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے سعید غنی نے کہا کہ بارش کے دوران کئی بڑی

شاہراہیں مکمل بند نہیں ہوئیں، شارع فیصل پر تین مقامات پر پانی تھا

جس کی وجہ سے ٹریفک متاثر ہوئی، ابھی مختلف آبادیوں میں پانی کھڑا ہے جس کو نکالنا ہے

یہ نہیں کہہ سکتا ہے کہ آج ہی تمام علاقوں سے پانی نکال دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ یوسف گوٹھ اور سعدی ٹاؤن میں بارش کا پانی موجود ہے

وہاں سے پانی نکالنے کی کوشش کررہے ہیں، یوسف گوٹھ،سعدی ٹاؤن اور رئیس امروہی ٹاؤن

میں بارش کا پانی آجاتا ہے۔

وزیر بلدیات کا کہنا تھا کہ کراچی کے بڑے نالوں کی صفائی کی ذمہ داری کے ایم سی کی ہے

کمشنرکے ساتھ اجلاس میں میئر اور ڈی ایم سیز سے پوچھا تھا کہ کس علاقے کے کتنے نالے صاف ہوئے

ہیں، میئر کراچی نے اجلاس میں بتایا کہ کئی نالے صاف ہوچکے ہیں اور بعض صاف ہوجائیں گے

نالوں کی صفائی کا کام میئر نے کرانا ہے سندھ حکومت نے نہیں

اس کام میں سندھ حکومت کے ایم سی اور ڈی ایم سیزکی معاونت کرتی ہے، 38 نالوں کی صفائی

کے لیے کے ایم سی نے ایک ارب 20 کروڑ مانگے تھے

حکومت نے 50 کروڑ روپے فراہم کیے تھے۔

کراچی میں بجلی کی صورتحال پر سعید غنی نے کہا کہ جیسے ہی بارش شروع ہوئی

کے الیکٹرک کے فیڈرز ٹرپ ہونا شروع ہوگئے، کراچی کے مختلف علاقوں میں 36 گھنٹے بعد بھی

بجلی بحال نہیں ہوئی،کے الیکٹرک کے خلاف کارروائی کے لیے صوبائی حکومت کے پاس

کوئی مکینزم نہیں، وفاقی حکومت ادارے کے خلاف کارروائی کرے۔

سعید غنی نے سوال کیا کہ صدر مملکت،گورنر، دو وفاقی وزرا کا تعلق کراچی سے ہے

انہوں نے شہر کے لیے کیا کیا؟

اس موقع پر مشیر اطلاعات مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ صوبائی حکومت تمام اسٹیک ہولڈرز کو

بٹھا کر کراچی کے مسائل حل کرنا چاہتی ہے، میئر کراچی اختیارات کا رونا روتے ہیں

ان کے پاس جواختیارات ہیں وہ اس کے مطابق کارکردگی کیوں نہیں دکھاتے۔

واضح رہے کہ میئر کراچی وسیم اختر نے شہر میں بارش کے بعد وفاقی حکومت کو خط لکھا تھا

جس میں انہوں نے سندھ حکومت کی جانب سے عدم تعاون پر وفاق سے مدد طلب کی تھی۔

تفصیلات کے مطابق شہر کے مختلف علاقوں سے تیسرے روز بھی پانی نہ نکالا جاسکا۔

بارش کا پانی کے ڈی اے گرڈ سٹیشن میں داخل ہوگیا جس سے سکیم نمبر 33 کے مختلف علاقوں میں

بجلی بند ہے۔ نشیبی علاقے تالاب بنے ہوئے ہیں، ہرجگہ سیلابی صورتحال ہے

پانی کی نکاسی کا کوئی راستہ نہیں، لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے۔

دوسری طرف سیلابی ریلہ سپر ہائی وے تک پہنچ گیا۔ مویشی منڈی بھی پانی میں ڈوبی ہوئی ہے

بیوپاری اذیت سے دوچار ہیں۔ پاک فوج کے دستے بھی امدادی کارروائیوں میں مصروف ہیں۔

کراچی یونیورسٹی ایمپلائزڈ سوسائٹی، پی سی ایس آئی آر سوسائٹی، کوئٹہ ٹاؤن

اسٹیٹ بینک سوسائٹی، گوالیار سوسائٹی، نیو انچولی سوسائٹی، زینت آباد، پنجابی سوداگران پیلی بھیت

نیو ٹیچر سوسائٹی، سپر ہائی وے مویشی منڈی میں بجلی غائب ہے۔

علاقہ مکینوں کا کہنا ہے کہ شکایات درج کرانے کے باوجود کے الیکٹرک کا عملہ نہیں پہنچا

جبکہ پانی کی نکاسی کے لیے بھی اقدامات نہیں کیے جارہے۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *