ٹوئٹر پر اداکارہ دیپکا کے حق میں آوازیں تو وہیں بائیکاٹ کا مطالبہ

ٹوئٹر پر اداکارہ دیپکا کے حق میں آوازیں تو وہیں بائیکاٹ کا مطالبہ

26 views

نام نہاد سیکولر ملک بھارت میں انتہاء پسند ہندوؤں کے شکار سے کوئی بھی مشہور شخصیت یاعام شہری نہیں بچ سکا ، اس بار انتہا پسند ہندوؤں کی زد میں بالی ووڈ کی خوبرو اداکارہ دیپکا پڈوکون آگئیں۔

بالی ووڈ کی مشہور و معروف خوبرو اداکارہ دیپکا پڈوکون گزشتہ روز جواہر لعل نہرو یونیورسٹی (جے این یو) میں

احتجاجی دھرنے میں شریک ہوئی تھیں۔ اس دوران اداکارہ نے میڈیا سے بات نہیں کی نہ ہی حکومت کیخلاف نعرے

بازی میں حصہ لیا اور کچھ دیر دھرنے میں شرکت کے بعد روانہ ہوگئیں۔

سوشل میڈیا پر دیپکا پڈوکون کی جانب سے مذہبی تعصب سے بالاتر ہوکر اس یکجہتی مظاہرے میں شرکت کے اقدام کو

بہت سراہایا جارہا ہے۔ جس کے بعد سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بھارت سمیت پاکستان میں بھی ہیش ٹیگ

دیپکا پڈوکون ٹاپ ٹرینڈ بن گیا ہے۔

صارفین کی جانب سے دیپکا کیلئے تعریفی ٹویٹس کئے جارہے ہیں، جن میں پاکستان کی مشہور و معروف

شخصیات بھی اداکارہ کے حق میں ٹویٹ کررہے ہیں۔

وہیں دوسری جانب بھارتی انتہا پسند جے این یو کے اساتذہ اور طلبا کا ساتھ دینے پر دیپکا پڈوکون پر برہم ہوگئے۔

سوشل میڈیا پر اداکارہ کی نئی آنے والی فلم چھپاک کا بائیکاٹ بھی کردیا ۔

بھارتی اداکارہ دیپکا پڈوکون کی دو روز میں پہلی پروڈکشن میں بننے والی فلم چھپاک ریلیز ہونے والی ہے۔

فلم میں اداکارہ نے تیزاب سے جھلسی ہوئی لڑکی کا کردار ادا کیا ہے۔

اس سے قبل سونم کپور، سوارا بھاسکر، دیا مرزا، عالیہ بھٹ ، رچا جڈا، جاوید جعفری ، شبانہ عظمی ، جاوید

اختر ، فرحان اختر ،زویا اختر، وارن دھون ، انیل کپور اور دیگر بالی ووڈ شخصیات مسلمان طلبا پر حملے کیخلاف آواز اٹھا چکے ہیں۔

خیال رہے کہ پانچ دسمبر کو بھارت کے دارالحکومت نئی دہلی کی جواہر لعل نہرو یونیورسٹی میں ہندو انتہا پسند تنظیم

آرایس ایس کے طلبہ ونگ اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد (اے بی وی پی) نے یونیورسٹی طلبہ و اساتذہ پر حملہ کیا تھا۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *