پاکستان کی افواج اپنی زمین اپنے سمندر اور اپنی ہواؤں کی محافظ

پاکستان کی افواج اپنی زمین اپنے سمندر اور اپنی ہواؤں کی محافظ

108 views

بلاشبہ بحریہ کسی بھی ریاست کی سمندری پالیسیوں اور حدود کا دفاع کرتی ہے۔ سمندر تجارتی لحاظ سے سب سے اہم اور موثر ذریعہ ہیں،پاکستان نیوی کو ملکی دفاع کا اہم حصہ تسلیم کیا جاتا ہے ۔

صبحین عماد

نیوی کے افسران اور جوان قوم کی اُمیدوں پر اپنی بھرپور صلاحیتوں کی بنیاد پر پورا اُترنے کی سعی میں مصروف عمل ہیں۔ ان کی کوششیں رائیگاں جانے

کی بجائے، دنیا سے داد حاصل کرنے میں پیش پیش ہیں۔ انیس سو پینسٹھ اور 1971 کی جنگ میں آرمی اور ائیرفورس نے پاکستانی سلامتی میں ہر اول دستے

کا کردار ادا کیا جس سے انہی پر توجہ مرکوز رہی۔

پاک بحریہ کے جوان نے ہمیشہ پاکستان اور ملک کی سالمیت کے لیے خود کو پیش پیش رکھا اور دشمن کے ناپاک عزائم کو اپنی جرت اور بروقت کارروائی

سے خاک میں ملایا ہے۔

 یہی وجہ ہے کہ پاکستان کی جانب دشمن ہمیشہ وار کرنے سے پہلے دس بار سوچتا ہے کیونکہ دشمن کو یہ اس بات کا با خوبی علم ہے کہ پاکستان کی افواج

خواہ وہ سمندری یو یا زمینی یا ہوایہ یہ پنے ملک کی حفاظت اور دشمن کو دھول چٹانا خوب جانتے ہیں ۔

پاک بحریہ نے جہاں دنیا میں بہترین جوان دے کر دنیا میں خود کو منوایا ہے ونہی پاک بحریہ کی تاریخ میں بہترین چیف آف نیول اسٹاف نے بھی پنی عمدہ

کارکردگی اور انتھک محنت سے ملک کے لیے اپنے آپکو ہمیشہ تیار رکھا ۔

دراصل چیف آف نيول اسٹاف جوکے چار ستارے والا ایڈمرل ہوتا ہے پاک بحریہ کا سربراہ ہوتا ہے۔ جس کو وزیر اعظم پاکستان صدر پاکستان سے مشاورت

کے بعد مقرر کرتا ہے۔

چیف آف نيول اسٹاف سویلین وزیر دفاع اور سیکرٹری دفاع کے ماتحت ہوتا ہے۔ پاکستان کی تاریخ میں قیام پاکستان سے لیکر ابتک 21 پاک بحریہ سربراہ

گزرے ہیں۔

رئیر ایڈمرل جیمز ولفرڈ جیفرڈ پاکستان بحریہ کے پہلے سربراہ رہے ہیں۔ قیام پاکستان کے بعد وہ پاکستان بحریہ کے پہلے سربراہ بنے اور 15 اگست 1947ء

سے 1950ء تک فلیگ آفیسر کمانڈنگ اور بعد ازاں 30جنوری 1953ء تک کمانڈر ان چیف آف پاکستان نیوی کے عہدے پر فائز رہے۔

اس کے بعد دوسری بار وائس ایڈمرل حاجی محمد صدیق چوہدری نے چیف آف نیول اسٹاف کا عہدہ سنبھالا اور آپ 31 جنوری 1953ء سے 28

فروری 1959ء تک عہدے پر فائز رہے۔ وائس ایڈمرل افضل رحمان خان نے یکم مارچ 1959ء سے 20اکتوبر 1966 تک عہدہ سنبھالا۔

وائس ایڈمرل سید محمد (ایس ایم) احسن پاک بحریہ کے چوتھے سربراہ رہے قیام پاکستان کے بعد انہوں نے پاک بحریہ میں خدمات انجام دینا شروع کیں ۔

سربراہ کے طور پر انہوں نے 20 اکتوبر 1966 ء سے 31 اگست 1969 ء تک اپنی خدمات انجام دیں۔

اس کے بعد وائس ایڈمرل مظفر حسن یکم ستمبر 1969-22 دسمبر1971 تک اپنی خدمات پیش کی۔

وائس ایڈمرل حسن حفیظ احمد 3 مارچ 1972 سے 9 مارچ 1975 تک سربراہ رہے۔

ایڈمرل محمد شریف 9 مارچ 1975ء کووائس ایڈمرل حسن حفیظ احمد کی ناگہانی موت کے بعد وہ 23 مارچ 1975ء کو پاکستان بحریہ کے چیف آف اسٹاف بنے

اور 21 مارچ 1979ء تک اس عہدے پر فائز رہے۔

وائس ایڈمرل کرامت رحمان نیازی 22 مارچ 1979 تا 23 مارچ 1983 تک پاک بحریہ کے آٹھویں سربراہ رہے اور 1964 میں پاکستان کی پہلی

آبدوز ’’غازی‘‘ کے کمانڈر بنے،1965ء اور 1971ء کی جنگوں میں حصہ لیااور نشان امتیاز(ملٹری)، ستارہ جرات( ملٹری) اور ہلال امتیاز(ملٹری) کے

اعزازات حاصل کیے۔

ایڈمرل طارق کمال کان 23 مارچ 1983 سے 9 اپریل 1986تک پاک بحریہ میں اپنی خدمات انجام دیں۔

ایڈمرل افتخار احمد سروہی 9 اپریل 1986 سے 9 نومبر 1988 تک پاک بحریہ کے دسویں سربراہ رہے۔

ایڈمرل بستور الحق ملک نے 10 نومبر 1988 سے 8 نومبر 1991 تک پاک بحریہ میں اپنی خدمات انجام دیں ۔

ایڈمرل سعی محمد خان 9 نومبر 1991 سے 9 نومبر 1994 تک 12 رہے۔

ایڈمرل مقصود الحق 10 نومبر 1994 سے 1 مئی 1997 تک رہے۔

ایڈمرل فصیح بخاری 2 مئی 1997 سے 2 اکتوبر 1999 تک پاک بحریہ میں اپنی خدمات کے ساتھ رہے۔

ایڈمرل عبدالعزیز مرزا پاک بحریہ کے پندرہویں سربراہ رہے ۔اور 2 اکتوبر 1999 کو پاکستان بحریہ کے چیف آف اسٹاف بنے اور 2 اکتوبر2002 تک اس

عہدے پر فائز رہے۔

ایڈمرل شاہد کریم اللہ پاک بحریہ کے سولہویں سربراہ رہے ہیں۔3 اکتوبر 2002 کو پاکستان بحریہ کے چیف آف اسٹاف بنے اور 6 اکتوبر2005 تک اس عہدے

پر فائز رہے۔

چیف آف نیول اسٹاف محمد افضل طاہر 7 اکتوبر 2005 سے 7 اکتوبر 2008 تک عہدے پر فائز رہے۔

ایڈمرل نعمان بشیرپاک بحریہ کے اٹھارویں سربراہ رہے ۔ایڈمرل نعمان بشیر سات اکتوبر2008 سے 7 اکتوبر 2011 تک پاک بحریہ کے امیر البحر عہدے پر

فائز رہے۔

ایڈمرل محمد آصف سندیلہ پاک بحریہ کے انیسویں سربراہ رہے ۔7 اکتوبر 2011 کو پاکستان بحریہ کے چیف آف اسٹاف بنے اور 7 اکتوبر2014 تک اس عہدے

پر فائز رہے۔ایڈمرل محمد ذکا ءاللہ پاک بحریہ کے بیسویں سربراہ ہیں ۔

ایڈمرل ظفر محمود عباسی پاک بحریہ کے اکیسویں سربراہ ہیں،جو پاک بحریہ کے فور اسٹار ایڈمرل ہیں اور پاک بحریہ کے 7 اکتوبر 2017 سے نیول چیف

سی این ایس ہیں۔

ایڈمرل امجدخان نیازی نے 7اکتوبر2020 بطور نیول چیف پاک بحریہ کی کمان سنبھالی، ایڈمرل امجد خان نیازی پاک بحریہ کے 22 ویں سربراہ ہیں۔

محمد امجد خان نیازی اس وقت چیف آف اسٹاف آپریشنز کے فرائض سر انجام دے رہے ہیں، انہیں ہلال امتیاز ملٹری اور ستارہ بسالت سے بھی نوازا جا چکا ہے

جبکہ انہیں فرانس کی جانب سے شیویلئے (نائٹ) میڈل سے بھی نوازا گیا۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *