مفتی صاحب کو بحال کرو۔۔۔حکومتی فیصلے پر عوام برہم

مفتی صاحب کو بحال کرو۔۔۔حکومتی فیصلے پر عوام برہم

564 views

سوشل میڈیا پر مفتی منیب الرحمٰن کی حمایت پر بنائے گئے ٹرینڈز اس وقت نمایاں  ہے، جہاں صارفین مفتی صاحب کو بحال کرنے کا مطالبہ کیا جارہا ہے۔

غانیہ نورین

مفتی منیب الرحمٰن کو سابق صدر پرویز مشرف کے دور میں رویت ہلال کمیٹی کا چیئرمین مقرر کیا گیا تھا اور وہ طویل عرصے سے اس عہدے پر فائز تھے۔

ان کے دور میں ملک میں رمضان کا چاند دیکھنا اور دو عیدوں کے ہونے پر مختلف تنازعات کاسلسلہ چلتا رہا ، مفتی منیب اور پشاور میں مسجد قاسم علی خان کے امام مفتی شہاب الدین پوپلزئی کے درمیان تکرار موضوع بحث بنتے رہے۔

VIDEO: 'Hand govt over to Popalzai so Peshawar metro can be completed', KP minister roasted - The Current

مگر جب ملک میں تحریک پاکستان کی حکومت آئی تو وفاقی وزیربرائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری اور مفتی منیب الرحمٰن کے درمیان بھی چاند کو لیکر جنگ چھیڑگئی  ،فواد چوہدری نے سالانہ کیلنڈر متعارف کروایا جس کی مفتی منیب الرحمان نے شدید مخالفت کی تھی۔

Fawad Chaudhry lashes at Mufti Muneeb over mosque lockdown – MM News TV

جس کے بعد مختلف موضوعات کو لیکر سوشل میڈیا پر مفتی منیب الرحمن کے حق کیلئے آواز بلند ہونے کا سلسلہ باندھا رہتا تھا۔

ایسا ہی کچھ بدھ کے روز بھی ہوا جب حکومت پاکستان نے رویت ہلال کمیٹی کی تشکیل نو کا اعلامیہ جاری کیا جس کے مطابق مولانا عبدالخبیر آزاد کو رویت ہلال کمیٹی کا نیا چیئرمین مقرر کیا گیا ہے۔

سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر مفتی منیب الرحمان کو بحال کرنے کا مطالبہ کیا جا رہا ہے۔مجموعی طور پر اکثر صارفین حکومتی فیصلے پر تنقید کرتے ہوئے اس بات کا اندیشہ ظاہر کر رہے ہیں کہ شاید یہ فیصلہ خادم حسین رضوی کا ساتھ دینے کی وجہ سے لیا گیا ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ’مفتی منیب کو بحال کرو ٹرینڈ میں اس وقت ٹرینڈنگ لسٹ میں تیسرے نمبر پر موجود ہے۔

خیال رہے کہ مفتی منیب الرحمٰن کی جگہ مقرر ہونے والے نئے چیئرمین مولانا خبیر آزاد 22 سال سے لاہور کی بادشاہی مسجد کے امام ہیں۔ ان کے والد مولانا عبدالقادر آزاد بھی بادشاہی مسجد کے امام رہے۔ آزاد خاندان گذشتہ 50 سال سے بادشاہی مسجد کی امامت سے منسلک ہے۔

مولانا خبیر آزاد نے عربی اور اسلامیات میں ایم اے کیا ہے جبکہ گذشتہ 15 برسوں سے وہ رویت ہلال کمیٹی کے رکن بھی ہیں اور اب انہیں کمیٹی کا سربراہ مقرر کیا گیا ہے۔

اعلامیے میں رویت ہلال کمیٹی کے 19 ارکان بھی شامل کیے گئے ہیں جن میں راغب نعیمی، حسین اکبر، مولانا فضل الرحیم، ڈاکٹر یاسین ظفر، مفتی اقبال چشتی، ڈاکٹر مفتی علی اصغر، فیصل احمد، سید علی قرار نقوی، مفتی فضل جمیل، حافظ عبدالغفور، یوسف کشمیری، قاری میراللہ، حبیب اللہ چشتی اور مفتی ضمیر احمد ساجد شامل ہیں۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *