inflation 808x454

اشیائے خوردو نوش کی قیمتوں میں اضافہ، حکومتی ادارے بری طرح ناکام

54 views

مہنگائی فیضؔ چھونے لگی ہے اب آسمان

دلی کے تخت پر کسے بیٹھا دیا گیا

غانیہ نورین

پاکستان میں ماہ صیام کے چاند کی نوید آتے ہیں منافع خور اپنی مان مانیوں پر اتر آتے ہیں، آٹا ، چینی ، گوشت ، پھل اور سبزیوں میں من چاہا اضافہ کرکے چوری بازاری کا بازار گرم ہوجاتا ہے جبکہ حکومت کے مہنگائی کنٹرول کے بڑے بڑے دعوے ہوا میں اڑتے دکھائی دیتے ہیں۔

ملک میں ایک طرف رمضان المبارک کا چاند دیکھتے ہی شیطان قید ہوجاتا ہے تو دوسری طرف ملک میں مہنگائی کا جن آزاد اور بے قابو ہوکر بازاروں اور مارکیٹوں میں دندناتا پھرتا ہے۔ جسے قابو کرنے کیلئے نا تو کوئی حکومتی نمائندہ نظر آتا ہے نا ہی اس طوفان پر قابو پانے کیلئے کوئی حکومتی پالیسی بنائی جاتی ہے۔

اس وقت ملک میں مہنگائی کا طوفان برپا ہوا ہے، اشیاء خوردونوش کی قیمتوں کو پر لگ چکے ہیں، آٹا ، چینی ، پھل ، سبزی ، گوشت ، دالیں ، دودھ ، انڈے سب کچھ مہنگا ہوچکا ہے، عوام ماہ صیام میں بھی زندگی کا پہیہ گھسیٹ گھسیٹ کر چلانے پر مجبور ہیں۔

ادارہ شماریات کی طرف سے جاری رپورٹ میں  کہا گیا ہے کہ ایک ہفتے کے دوران 16 اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ ہوا۔ آٹے کا 20 کلو کا تھیلا 26 روپے مہنگا ہو گیا، ملک میں آٹے کے 20 کلو  کے تھیلے کی اوسط قیمت 988 روپے 36 پیسے پر پہنچ گئی۔ گائے کا گوشت 4 روپے 60 پیسے، بکرے کا گوشت 6 روپے 72 پیسے اوسط مہنگا ہوا، حالیہ ہفتے 11 اشیاء کی قیمتوں میں کمی رہی۔

مزید پڑھیں: رمضان : پاکستان میں مہنگائی ، دیگر ممالک میں سستے پیکج  

لہسن 7 روپے 35 پیسے فی کلو سستا ہوا ،دال ماش کی فی کلو قیمت میں 4 روپے 22 پیسے کمی ہوئی، دال چنا 4 روپے ،دال مونگ 5 روپے 14 پیسے ،دال مسور 2 روپے 70 پیسے فی کلو سستی ہوئی۔  کیلا جو 80 روپے درجن بڑی آسانی کے ساتھ مل جاتا تھا، دو سو روپے پر جا پہنچا اور لیموں کے نرخ جو چند روز پہلے تک سو روپے فی کلو گرام تھے، بڑھ کر چار سو روپے ہو چکے تھے اور کچھ ایسی ہی صورتحال دیگر اشیائے صرف کی بھی ہیں۔

آلوکی قیمت 3 روپے87 پیسےاضافے کے بعد 43 روپے فی کلو تک پہنچ گئی، اسی طرح ٹماٹرکی قیمت 3 روپے 33 پیسے اضافےسے48 روپےفی کلو تک پہنچ گئی۔

مرغی کے بعد مرغی کے گوشت کی قیمتوں کو بھی پر لگ چکے ہیں، کراچی میں مرغی کا گوشت کے ریٹ آسمان پر چڑھ گئے، پرائس لسٹ کے مطابق مرغی کا گوشت 214روپے کلو ہے جبکہ بازار میں 500 روپے کلو تک فروخت ہو رہا ہے۔

دکاندار کا کہنا ہے کہ آج 286روپے کلو کے حساب سے مرغی سپلائی ہوئی ہے، کمشنر کراچی دو سال سے پرانے ریٹ ہی جاری کر رہے ہیں، روڈ بند ہو جاتے ہیں تو تو فارم والے پیسے بڑھا دیتے ہیں۔

شہریوں کا شکوہ ہےکہ مہنگائی رمضان سے پہلے کی ہے، حکومتی دعوے دعوے ہی رہ گئے، ہفتے میں ایک بار کھانے والے چکن پندرہ دن میں ایک بار کھا رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: کورونا کی تیسری لہر مگر مستحکم ہوتی پاکستانی معیشت

دوسری جانب ملک میں چینی نایاب ہوچکی ہے، عوام چینی کی خاطر در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہے، مختلف شہروں میں چینی 85 سے 110 روپے کلو میں فروخت ہوئی۔ لاہور میں چینی سب سے مہنگی 110 روپے میں جبکہ راولپنڈی میں 105 روپے فی کلو رہی۔ اسلام آباد، کراچی، کوئٹہ، پشاور میں ریٹ 100 روپے تک رہا۔

کراچی میں دہی بھی سب سے مہنگا 200 روپے کلو تک پہنچ گیا۔ مختلف شہروں میں دودھ کے دام 130 روپے جبکہ زندہ برائلر چکن 242 سے 320 روپے کلو میں فروخت ہوا۔

اس وقت رمضان المبارک کے سائے تلے ملک کورونا وائرس کی سنگین صورتحال سے بھی دوچار ہے ایسے میں حکومت پاکستان کیلئے بے روزگاری ، بھوک افلاس، مہنگائی، افراط زر جیسے مسائل سے نمٹنا کسی چیلنج سے کم نہیں، مگر حکومت کا معیشت کے مستحکم ہونے کا دعویٰ صرف دعویٰ دکھائی دے رہا ہے کیونکہ جس طرح ملک میں مہنگائی کی شرح میں مسلسل اضافہ ہوتا دکھائی دے رہا ہے حکومت کی ناکام پالیسی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

Source: Media Reports
Content:Ghania Naureen

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *