آپ کی حرکتیں نہیں ہیں اے سی والی:ٹوئٹر پر فردوس عاشق اعوان کی ویڈیو پر ہنگامہ

آپ کی حرکتیں نہیں ہیں اے سی والی:ٹوئٹر پر فردوس عاشق اعوان کی ویڈیو پر ہنگامہ

107 views

وزیراعلی پنجاب کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے ایک سستے بازار کے دورے کے موقع پر ناقص انتظامات پر قریب کھڑی خاتون اسسٹنٹ کمشنر کو ڈانٹا تو دونوں کے درمیان تکرار کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی۔

غانیہ نورین

وزیراعلی پنجاب کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان اپنے برجستہ انداز اور بلند آواز کے لیے مشہور ہیں۔ وہ اکثر اپنے دبنگ اور بے باک انداز کے باعث سوشل میڈیا صارفین کی توجہ حاصل کرنے میں کامیاب رہتی ہیں ،حال ہی میں ایک بار پھر فردوس عاشق اعوان کا بیباک انداز سوشل میڈیا پر سب کی توجہ کا مرکز بن گیا، جہاں کچھ صارفین نے انہیں تنقید کا نشانہ بنایا تو کسی نے ان کے حق میں آواز بلند کی۔

پاکستان کے سوشل میڈیا ٹائم لائن پر وزیراعلی پنجاب کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان اور خاتون اسسٹنٹ کمشنر سونیہ صدف اس وقت ٹاپ ٹرینڈ ہے، جس کی وجہ رمضان بازار کے دورے کی ویڈیوز بنی جس میں اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ سونیا صدف اور فردوس عاشق اعوان کے درمیان پھلوں کے معیار پر بحث و تکرار ہوتے ہوئے نظر آتی ہے۔

پھر ایک اور ویڈیو میں فردوس عاشق اعوان باقاعدہ ڈانٹنے کے انداز میں سونیا صدف کو کہتی ہیں کہ آپ کی حرکتیں ہی نہیں ہیں اے سی (اسسٹنٹ کمشنر) والی۔

تقریباً 2 منٹ کی ان ویڈیوز کے بعد پاکستان میں سوشل میڈیا صارفین اس حوالے سے منقسم ہیں۔ زیادہ تر کا خیال ہے کہ فردوس عاشق اعوان کا لہجہ اور طریقہ درست نہیں تھا جبکہ کچھ لوگ ایسے بھی ہیں جن کے مطابق ‘افسر شاہی’ کے ساتھ ایسے ہی پیش آنا چاہیے۔

ویڈیو میں ایسا کیا تھا؟؟

اتوار کی شام سوشل ٹائم لائنز پر وائرل ہونے والی مختصر دورانیے کی ویڈیو میں ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان سیالکوٹ میں قائم سستے رمضان بازاروں میں ناقص اشیاء کی فروخت پر برہم دکھا دی۔ فردوس عاشق اعوان نے اسسٹنٹ کمشنر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ افسرِ شاہی کی کارستانیاں حکومت بھگت رہی ہے۔

اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ انھیں خراب پھلوں کے بارے میں کہتی ہیں کہ ’یہ گرمی سے (خراب) ہوگیا ہے‘ جس پر فردوس عاشق اعوان اُن سے کہتی ہیں کہ ’اسے فوراً تبدیل کروائیں، یہ آپ کی اور آپ کے سٹاف کی ڈیوٹی ہے۔

وہ سونیا صدف سے غصے میں کہتی ہیں کہ ’تھرڈ کلاس فروٹ یہاں سے اٹھوائیں اور جب سونیا صدف کہتی ہیں کہ وہ فردوس عاشق اعوان سے پہلے دو مرتبہ وزٹ کر چکی ہیں تو فردوس عاشق اعوان کہتی ہیں کہ ’آپ تنخواہ اس چیز کی لیتی ہیں، میں تنخواہ اس چیز کی نہیں لیتی ہوں‘ جس پر اسسٹنٹ کمشنر کہتی ہیں کہ ’میڈم آرام سے بھی تو بات کی جا سکتی ہے‘۔

ویڈیو کے الگ الگ حصوں میں نمایاں ہے کہ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے اے سی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اسسٹنٹ کمشنر کو بظاہر اُن سے پیچھے رہ جانے پر غصہ کرتے ہوئے کہتی ہیں کہ آپ کو ہم (کبھی) کہیں سے برآمد کرتے ہیں آپ وزٹ پر آئی ہوئی ہیں، جس پر سونیا صدف رش ہونے کا کہتی ہیں۔

اس پر فردوس عاشق اعوان یکطرفہ طور پر اسسٹنٹ کمشنر کو تلخ انداز میں ڈانٹتے ہوئے کہتی ہیں کہ رش سب کے لیے ہے، آپ کوئی آسمان سے اتری ہوئی ہیں؟

فردوس عاشق اعوان کے چند مزید جملوں کے بعد سونیا صدف وہاں سے چلی جاتی ہیں اور فردوس عاشق اعوان اُن کے پیچھے اپنا غصہ جاری رکھتے ہوئے کہتی ہیں کہ تم وی آئی پی ڈرائنگ روموں میں بیٹھو جا کر، یہ کون سا طریقہ ہے تمہارا۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ ’ہر شہر کے رمضان بازار کا وزٹ کیا مگر سب سے برا حال سیالکوٹ کا ہے‘۔ دوسری جانب چیف سیکریٹری پنجاب نے سیالکوٹ میں انتظامی افسر کے ساتھ ’غیر مہذب‘ برتاؤ کی مذمت کی ہے۔

اسسٹنٹ کمشنر کے جوابات اور معاون خصوصی برائے وزیراعلی پنجاب کے اعتراضات کی ویڈیو پر تبصرہ کرنے والوں نے جہاں سستے بازاروں میں دستیاب اشیا، ان کے معیار اور قیمتوں پر گفتگو کی وہیں ویڈیو میں دکھائی دینے والا انداز گفتگو بھی متعدد افراد کا موضوع بنا۔

معاون خصوصی برائے اطلاعات اور اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ کی تکرار دکھاتی ویڈیو کے دو الگ الگ کلپس پر تبصرہ کرنے والوں میں سے کچھ لوگ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کے حامی دکھائی دیے، تو کچھ ایسے تھے جو اے سی سونیا صدر کے موقف کو درست قرار دیتے رہے۔ جبکہ کچھ صارفین ایسے بھی تھے جو سستے بازاروں میں دستیاب اشیائے ضروریہ کے معیار اور ان مراکز میں چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے کی شکایات کرتے نظر آئے۔

حسان خاور

فردوس عاشق اعوان

فردوس عاشق اعوان

فردوس عاشق اعوان

فردوس عاشق اعوان

دوسری جانب چیف سیکرٹری پنجاب جواد رفیق ملک نے سیالکوٹ کے واقعہ پر اپنے ردعمل میں کہا کہ  سیالکوٹ کے رمضان بازار میں انتظامی افسر کے ساتھ غیر مہذب برتاو کی مذمت کرتے ہیں۔

چیف سیکٹری کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ اسسٹنٹ کمشنر سونیا صدف اور دیگر انتظامی افسران سخت گرمی اور کورونا کی وباء کے باوجود فرنٹ لائن پر موجود ہیں۔ ’ کسی بھی سرکاری افسر یا عملے کے ساتھ غیر اخلاقی زبان استعمال کرنا قابل مذمت ہے۔‘

ان کے مطابق پنجاب بھر میں انتظامی افسران دن رات عوام کی سہولت کے لیے فیلڈ میں موجود ہیں جو قابل ستائش ہے۔ ’ کسی کو یہ زیب نہیں دیتا کہ وہ سرکاری افسران کی تذلیل کرے۔‘

چیف سیکریٹری کا کہنا تھا کہ انہوں نے اس افسوسناک واقعے کے حوالے سے تحفظات وزیر اعلی پنجاب تک پہنچا دییے ہیں۔

Content:Ghania Naureen
Source: Media Reports

 

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *