ایک اور مسلمان خاندان اسلامو فوبیا کی بھینٹ چڑھ گیا

ایک اور مسلمان خاندان اسلامو فوبیا کی بھینٹ چڑھ گیا

320 views

کینیڈا کے صوبہ اونٹاریو کے شہر لندن میں ایک پک اپ ٹرک ڈرائیور نے فٹ پاتھ پر گاڑی چڑھا کر ایک ہی خاندان کے چار افراد کو کچل کر ہلاک کرڈالا۔۔۔ پولیس نے اسے مسلم نفرت پر مبنی جرم قرار دیا ہے۔

غانیہ نورین

امریکا ، یورپ اور کینیڈا کیلئے کہا جاتا ہے کہ یہ ایک فلاحی ریاست ہے یہاں کے سرحدوں کے دروازے ہر مذہب کے ماننے والوں کیلئے ہمیشہ کھلے رہتے ہیں، یہاں رنگ ، نسل ، زبان ، تہذیب اور ثقافت کی کوئی قید نہیں ہوتی ہر ایک کے لیے یکساں اصول ہیں ، ہر کوئی یہاں آزاد اور محفوظ ہیں۔

ان ممالک کی کوششیں یہی ہوتی ہے کہ جتنا ہوسکے امن کا پیغام دیا جاسکے اور اس کو بڑھایا جائے مگر گزشتہ چند سالوں کے دوران یورپی ، برطانوی اور امریکن اسٹیٹ میں بھی نفرت اور اسلاموفوبیا اپنی جڑیں گاڑنے لگے ہیں۔

مغربی ممالک میں بڑھتے مسلمانوں کی تعداد اور امن پسند مذہب اسلام کا بڑے پیمانے پر پھیلاؤ اسلام دشمن عناصر کی آنکھوں میں کھٹکنے لگا ہے جس کی وجہ سے ان ممالک میں اسلاموفوبیا جیسے واقعات ایک الارمنگ صورتحال بنتی جارہی ہے جو ان ریاستوں میں گھس کر انکی بنیادوں کو کھوکھلا کرسکتا ہے کیونکہ نفرت اور اسلاموفوبیا ایک آگ کی طرح ہے جو چند لمحوں میں ہر چیز کو اپنی لپیٹ میں لے لیتا ہے۔

امریکا اور فرانس میں جہاں نفرت انگیز نظریہ کے تحت آئے دن مسلمان موت کی گھاٹ اتار دیئے جاتے ہیں ،نیوزی لینڈ کی ریاست کرائسٹ چرچ میں ہونے والے مسجد پر حملہ آج بھی لوگوں کے ذہنوں پر نقش ہے۔ وہیں کینیڈا جیسی فلاحی ریاست میں اسلاموفوبیا کا واقعہ پوری دنیا کیلئے ناقابل فراموش واقعے سے کم نہیں اور ساتھ ہی مسلم اکثریت رکھنے والے صوبے اونٹاریو میں اسلام مخالف سوچ کی بنیاد پر خاندان کو بھینٹ چڑھادینا ناسور دہشت گردی کی شروعات ہے۔

مزید پڑھیں: کرائسٹ چرچ کے ملزم کو سزا ، ٹرائل کے موقع پر رقت آمیز مناظر

Image

غیر ملکی میڈیا کے مطابق کینیڈا کے صوبے اونٹاریو دہشتگردی کا سفاکانہ واقعہ پیر کے روز پیش آیا جہاں ایک ٹرک ڈرائیور نے ایک مسلم خاندان کے چار افراد کو ’سوچے سمجھے منصوبے‘ کےتحت ٹرک سے کچل کر ہلاک کیا ہے۔

ایک ہی خاندان کے پانچ افراد فٹ پاتھ پر ساتھ ساتھ چل رہے تھے۔ ایک پک اپ ٹرک نے انہیں اس وقت روند ڈالاجب وہ ایک انٹرسیکشن کراس کرنے کے لیے کھڑے تھے۔

کینیڈین پولیس نے بیس سالہ مشتبہ کینیڈین نوجوان کو اونٹاریو کے شہر لندن کے انٹرسیکشن کراس واک جہاں یہ واقعہ پیش آیا سے سات کلو میٹر دور ایک مال سے گرفتار کیا ہے۔

People light candles at a makeshift memorial in London, Ontario, Canada June 7, 202

حملہ آور کا نام نیتھانیئل ویلٹ مین بتایا گیا ہے۔ وہ 20 سال کے ہیں اور لندن سے تعلق رکھتے ہیں۔ پال وائٹ نے بتایا کہ ابھی یہ معلوم نہیں ہے کہ حملہ آور کے کسی نفرت انگیز گروہ سے تعلقات ہیں یا نہیں۔ زیرحراست نوجوان پر قتل کے چار اور اقدام قتل کا ایک الزام عائد کیا گیا ہے۔ حملے میں زخمی ہونے والا ایک بچہ ہسپتال میں زیر علاج ہے۔

ڈیٹیکٹیو سپرینٹنڈنٹ پال وائٹ نے نیوز کانفرنس کو بتایا کہ یہ مانا جا رہا ہے کہ ان افراد کو مسلمان ہونے کی وجہ سے نشانہ بنایا گیا۔

اُنھوں نے کہا کہ پولیس مقدمے میں دہشتگردی کی دفعات شامل کرنے پر غور کر رہی ہے۔

ہلاک ہونیوالوں کے نام جاری نہیں کیے گئے لیکن شہر کے میئر ایڈ ہولڈر کے مطابق ان میں 74 سالہ خاتون، ایک 46 سالہ مرد، ایک 44 سالہ خاتون اور 15 سالہ لڑکی شامل ہے جو ایک ہی خاندان کی تین نسلو ں کی نمائندگی کرتے ہیں۔

کینیڈا کے وزیر اعظم جسٹن ٹروڈو نے ٹویٹ کیا کہ لندن، اونٹاریو سے آنے والی خبر سے انھیں شدید صدمہ پہنچا ہے۔ جن افراد کے پیاروں کو اس نفرت آمیز واقعے نے دہشت زدہ کیا ہے، ہم آپ کے ساتھ ہیں۔ ہم اس بچے کے ساتھ بھی کھڑے ہیں جو اس وقت ہسپتال میں داخل ہے۔ ہمارے دل آپ کے ساتھ ہیں اور ہم آپ کے بارے میں سوچ رہے ہیں۔

ہم لندن کی مسلم کمیونٹی اور پورے ملک میں موجود مسلمانوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اسلاموفوبیا کی یہاں کوئی جگہ نہیں ہے۔ خاموشی سے پنپنے والی یہ نفرت نقصان دہ اور انتہائی شرمناک ہے۔ اسے ختم ہونا ہو گا۔

سوشل میڈیا پر ردعمل

واقعے کی اطلاعات سامنے آتے ہی سوشل میڈیا پر صارفین نے اپنے جذبات کا اظہار کیا اور مقتولین کے ساتھ تعزیاتی پیغام بھی جاری کیے جہاں مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر ایک بار پھر اسلاموفوبیا کے ہیش ٹیگس کے ساتھ تبصروں سے بھرگیا ہے جبکہ کئی صارفین نفرت اور اسلام مخالف سوچ کی نظر ہونے والے دیگر افراد اور واقعات کو یاد کرکے “مسلم لائیوز میٹرز”کا ہیش ٹیگ چلا رہے ہیں۔

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی نے کینیڈا میں پاکستانی نژاد فیملی کے ساتھ المناک واقعہ کے حوالے سے بیان میں کہا کہ پولیس کی تحقیقات کے مطابق واقعہ میں اسلاموفوبیا کا عنصرموجود ہے، میرے نزدیک یہ دہشت گردی کا واقعہ ہے ۔

یہ بھی پڑھیں: گستخانہ خاکوں کی نمائش اسلام پر حملہ ہے

وزیراعظم عمران خان نے کینیڈا میں پیش آئے دہشتگردی پر شدید مذمت کرتے ہوئے ٹوئٹ کیا کہ اونٹاریو کے علاقے لنڈن میں ایک پاکستانی نژاد مسلمان کینیڈین خاندان کے قتل پر بے حد افسردہ ہوں۔ دہشت گردی کا یہ قابل مذمت اقدام مغربی ممالک میں بڑھتے ہوئے اسلاموفوبیا کی علامت ہے جس کے (اسلاموفوبیا) تدارک کے لئے عالمی برادری کی جانب سے کلی طور پر اقدامات وقت کی اہم ضرورت ہیں۔

Source: Media Reports
Content:Ghania Naureen

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *