بھارت میں کورونا کی تباہ کاریاں دوہزار سے زائد اموات

بھارت میں کورونا کی تباہ کاریاں دوہزار سے زائد اموات

45 views

بھارت میں کورونا کی لرزہ خیز تباہ کاریاں اپنے پورے عروج پر ، بھارتی وزارت صحت کے اعداد و شمار کے مطابق ، ملک بھر میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کووڈ کے باعث دوہزار اموات کی اطلاعات ہیں۔

فہمیدہ یوسفی

طبی ماہرین نے کورونا کی تیسری لہر کے بارے میں خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ یہ پچھلی دونوں لہروں سے بھی زیادہ خطرناک ثابت ہوسکتی ہے
جبکہ انڈین میڈیکل ایسوسی ایشن (IMA) نے ملک کی سیاحتی مقامات کھولنے اور زیارت کے سفر کی اجازت دینے کے خلاف وارننگ جاری کرتے ہوئے کہا کہ یہ اجازت کورونا کی تیسری لہر کے لیے “سپر پھیلاؤ” کے طور پر کام کریگی ۔

واضح رہے کہ کورونا کی دوسری تباہ کن دوسری لہر کے جس کی وجہ کورونا کا سب سے متعدی اور خطرناک وئرینٹ ڈیلٹا کو قرار دیا گیا جو اب بھارت سے نکل کر دنیا کے اسی ممالک تک پھیل چکا ہے – اس تباہ کن لہر نے بھارتی صحت کے نظام کو مکمل طور پر بے نقاب کرکے رکھدیا جب منظر عام پر لوگ سڑکو ں پر آکسیجن کے لیے تڑپتے رہے ساتھ ہی ہسپتالوں میں ادویات اور بیڈز بھی کم یاب رہے دوسری جانب اس دوسری لہر میں سینکڑوں مرٰیضوں کو نابینا کرنے والا بلیک فنگس بھی سامنے آیا ۔

مزید پڑھیں: بھارت میں پھیلنے والی بیماری بلیک فنگس کیا ہے؟علامات اور وجوہات

اس سنگین صورتحال میں ماہرین کو خدشہ ہے کہ انفیکشن کی تیسری لہر دور نہیں ہے کیونکہ ملک کے مختلف حصوں میں سفری پابندیوں میں نرمی کی گئی ہے۔

انڈین میڈیکل ایسوسی ایشن نے ریاستی حکومتوں اور شہریوں سے اپیل کی کہ وہ COVID-19 کے خلاف حفاظتی تدابیر اپناکر رکھیں کیونکہ ملک بھر میں تیسری لہر کسی بھی وقت زور پکڑ سکتی ہے ۔

انڈین میڈیکل ایسوسی ایشن نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ ، ” انتہائی مشکل وقت میں ، ملک کے بہت سارے حصوں میں ، حکومت اور عوام دونوں مطمٔن ہیں اور COVID اسی او پیز کی خلاف ورزیاں کرتے ہوئے مختلف قسم کے اجتماعات میں مصروف ہیں۔”

مزید پڑھیں: کورونا کے بعد بھارت میں ایک اور جان لیوا بیماری کا حملہ
دوسری جانب حکومتی عہدیداران مسلسل شہریوں پر زور دے رہے ہیں کہ وہ سیاحتی مقامات پر بھیڑ بھاڑ سے گریز کریں اور ان کو متنبہ کررہے ہیں کہ دوسری کورونا وائرس کی لہر ابھی ختم نہیں ہوئی ہے۔اور عوام سے مزید کچھ مہینوں ککے لیے ایس او پیز پر سختی سے عمل کرنے لیے کہہ رہے ہیں ۔

یاد رہے کہ بھارت میں کوویڈ 19 سے 408،000 سے زیادہ ہلاکتوں کی اطلاعات ہیں جو دنیا کی تیسری سب سے بڑی تعداد ہے۔

950 ملین اہل بالغ آبادی میں سے صرف 8 فیصد کو مکمل طور پر ویکسین کی جاسکی ہے اور اس وقت بھارت کی ویکسینیشن مہم کی رفتار بھی کم ہوگئی ہے۔

مزید پڑھیں: کوویڈ19: بھارت میں لاشوں کا انبار،حالات خراب کیسے ہوئے؟؟

ایک ایسے وقت میں جب بھارت کے طبی ماہرین کورونا کی تیسری لہر کے بارے میں خوفزدہ ہیں وہیں دوسری جانب بھارت میں ایک بار پھر اہم ریاستوں کے الیکشن سر پر ہیں اب دیکھنا یہ ہے کہ مودی سرکار جس پر پہلے ہی کورونا کے خلاف بروقت اقدامات نہ لینے کے باعث شدید تنقید کی جارہی ہے اس سنگین صورتحال سے کس طرح نمٹینگے ۔

مصنف کے بارے میں
Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *