بھارت : تین ہندو بھگوان بیمار پڑگئے، لو لگنے سے طبیعت ناساز

بھارت : تین ہندو بھگوان بیمار پڑگئے، لو لگنے سے طبیعت ناساز

54 views

بھارتی صوبے مدھیہ پردیش کے پنّا ضلع میں واقع بھگوان جگن ناتھ، ان کے بھائی اور بہن کی مورتیوں کی طبیعت دو ہفتے قبل ناساز ہو گئی تھی۔ ڈاکٹروں نے علاج معالجے کے بعد اتوار کے دن ان کے صحت یاب ہوجانے کا باضابطہ اعلان کر دیا۔

غانیہ نورین

دنیا میں عالمی طاقتیں اور سپرپاور ممالک جس تیزی سے ترقی کررہی ہیں وہیں نام نہاد سیکولر ملک بھارت قوم پرستی اور ہندومت مذہب کے اندھے عقیدے کے بوجھ تلے دبے جارہے ہیں ، بھارت میں ہندو توا کی عجیب و غریب خبریں مقامی میڈیا میں شہ سرخیاں تو ہوتی ہی تھیں تاہم اب عالمی میڈیا پر بھی ان اندھے عقیدے اور عجیب و غریب ہندو روایات کی خبروں سے بھرا ہے۔

عالمی میڈیا کے مطابق گزشتہ ماہ کے اواخر میں شدید گرمی کے دوران انہوں نے کافی دیر تک دھوپ میں غسل کر لیا تھا، جس کی وجہ سے انہیں لو لگ گئی تھی اور وہ بیمار پڑ گئے تھے۔ وہ 15 دنوں تک علیل رہے۔

مزید پڑھیں: کورونا دیوی :بھارت واسی قوم پرستی کے بوجھ تلے

Indien Vorbereitungen zur Eröffnung des Ram Tempels in Ayodhya

ان 15 دنوں کے دوران انہیں روایتی کھانے کے بجائے سیاہ مرچ، ادرک، دار چینی جیسے مصالحہ جات سے تیار جوشاندہ پیش کیا گیا۔

مقامی میڈیا کی خبروں کے مطابق ڈاکٹروں کے ایک گروپ نے اتوار کے روز پوجا کے بعد ‘بھگوان‘ کی مورتیوں کا حتمی طبی معائنہ کیا۔

BdTD Bild des Tages deutsch | Nepal | Sadhu

میڈیکل ٹیم میں شہر کے معروف ڈاکٹرز شامل تھے۔ انہوں نے مختلف طرح کی جانچ کے بعد بھگوان جگن ناتھ، ان کے بڑے بھائی بل بھدر اور بہن سبھدرا کو مکمل صحت مند قرار دے دیا۔

خیال رہے کہ ہندو کیلنڈر کے مطابق ہر برس جیٹھ کے مہینے میں بھگوان جگن ناتھ کی رتھ یاترا نکالی جاتی ہے۔ یاترا شروع ہونے سے قبل ان کی مورتیوں کو مندر سے نکال کر اشنان کرایا جاتا ہے۔ لیکن اسی دوران لو لگنے سے وہ بیمار پڑ جاتے ہیں۔

بیمار پڑنے کے بعد بھگوان کا معمول تبدیل ہوجاتا ہے۔ ڈاکٹر انہیں روزانہ دوائیں دیتے ہیں۔ اس دوران مندر کے دروازے عقیدت مندوں کے لیے بند رہتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: مندر کی سیکیورٹی کیلئے مودی سرکار کس سے خوفزدہ ہے؟؟

Source:DW
Content:Ghania Naureen

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *