6th

شاہینوں کی لازوال داستان ۔۔۔

75 views

یہ حقیقت میں پاکستان کے شاہینوں کا دن ہے۔ ہم جو اس ملک کی آزاد فضاو¿ں میں پھرتے ہیں وہ انہیں شاہینوں کی بدولت ہے جو ہم سب پاکستانیوں کی خاطر حفاظتی اڑانیں بھرتے ہیں۔ مادرِ وطن اور پوری قوم کی حفاظت کے لیے ہر لمحہ کوشاں رہتے ہیں

فہمیدہ یوسفی

قارئین کی بڑی تعداد پاک فضائیہ کی تاریخ سے واقفیت نہیں رکھتی ہو گی جس سے آگا ہ ہونا بہت ضروری ہے کہ ہماری فضائیہ جسے تقسیم ہند کے وقت انگریز اور ہندو بنیا کی ملی بھگت کے تحت اس کے جائز اثاثوں اور ضرورتوں سے محروم رکھا گیا، اس نے کس طرح خود سے کئی گنا بڑے دشمن کو نیست نابود کر کے رکھ دیا۔

دراصل یہ لازوال داستان خدائی مدد اور ہمارے جانبازوں کے جذبہ ایمانی سے رقم ہو پائی جس پر پاکستانی قوم آج بھی رشک کرتی ہے۔

آئیے اب آپ کو ماضی کے ان دریچوں میں لیے چلتے ہیں، جس سے ہمیں یہ معلوم ہوگا کہ وسائل کی کمی کے باوجود ہمارے شاہینوں اور جانبازوں نے یہ کام کیسے کیا؟

پاکستان کے دفاع کو مضبوطاور ناقابل تسخیر بنانا قائداعظمؒ کے ایجنڈے میں سرفہرست تھا۔ تقسیم کے وقت رائل ائیرفورس آف پاکستان کے پاس 122 جہاز اور 2232 افسر اور جوان تھے۔پاک فضائیہ نے وسائل کی کمی کا مقابلہ اچھی ٹریننگ سے کیا۔

مئی 1965ءکو رائل ائیرفورس آف پاکستان پاکستان ائیر فورس بن گئی۔ نورخان نے پاک فضائیہ کو جدید خطوط پر استوار کیا جس نے 1965ءمیں بھارتی فضائیہ کے بخیئے اُدھیڑ دیئے، چین کی مدد سے پاکستان ۲۳ایروناٹیکل کمپلیکس کامرہ کی تعمیر ایک بڑی کامیابی تھی۔

پاک فضائیہ تشکیل سے دور حاضر تک جرأت، شجاعت،جذبہ شہادت جیسی درخشاں روایات کی امین ہے ۔ پاک فضائیہ نے ملکی دفاع میں ہمیشہ ہراول دستے کا کردار ادا کر کے بہادری اور قربانی کی ایسی لازوال داستانیں رقم کیں جو کہ ملکی تاریخ میں سنہرے حروف سے لکھی جائیں گی۔مگر جس طرح پاک فضائیہ کے شا ہینوں نے 1965 ء کی جنگ میں واضح عددی برتری کے حامل دشمن کو شکست دی تو یہ داستان دُنیا کی فضائی تاریخمیں امر ہو گئی۔

اس جنگ کے دوران پاک فضائیہ کے شاہینوں نے نہ صرف بھارتی فضائیہ کو شکستِ فاش دے کر بالکل مفلوج کر دیا، بلکہ اپنی برّی فوج کی بھی بروقت مدد کر کے دشمن کو بے بس کر دیا۔1965 ء کیجنگ کے دوران پاک فضائیہ نے کئی محیرالعقول کارنامے سر انجام دیئے جو قابل زکر ہیں اور ہمیں اپنی تاریخ معلوم ہونا چاہیے تاکہ ہماری نئی نسل کو اس بات سے آگاہی حاصل ہو کہ آج سے 50 سال قبل پاک فضائیہ نےکس طرح اپنے مادرِوطن کا دفاع کیا تھا۔ حقیقت میں یہ وہ دن تھاجب بھارت کو ہماری فورسز کی طاقت کا پہلی بار اندازہ ہوا،یہ وہ دن تھا جس پر قوم فخر کر سکتی ہے۔

یہ وہ دن تھا جب بھارتیوں کی خوش فہمی کو ہمیشہ کے لیے دفن کر دیا گیا۔یہ وہ دن تھا جس دنہم نے بھارتیوں کو سرپرائز دیا تھا، یہ وہ دن جس دن قوم نے دشمن کی لاشیں دیکھیں ۔یہ وہ دن جب ہمارے جذبے جوان، جوش انتہا پر پہنچا ہوا تھا۔ یہ وہ دن جو فضائی جنگوں کی تاریخ پاکستان کے نام لکھی گئی۔

یہ وہ دن تھاجب بھارتی فضائیہ نے پاکستانی طیاروں کو دیکھ کر اپنے رخ بدل لیے تھے۔ یہ وہ دن تھا جب پاکستانی جوانوں نے دشمن کے 53طیارے تباہ کر کے تاریخ رقم کی تھی۔ یہ وہ دن تھا جب دنیا بھر میں ہمارے فائٹرز کا چرچاہوا۔اور یہ وہ دن تھا جب مغرب نے دیکھا کہ اپنے ملک کی خاطر کس قدر جان نچھاور کرنے والے لوگ ہیںآج بھی پاک فضائیہ اپنے ان عظیم ہیروز کے نقشِ قدم پر چلتے ہوئے ملکی فضائی دفاع کے لئے جرأت ، پیشہ ورانہ مہارت اور جذبۂ ایمانی کے ہتھیاروں سے لیس ہے۔ جنگ کا میدان ہو یا عملی تربیت کے کٹھن مراحل پاکفضائیہ کے شاہین ہر مرحلے پر ہر دم چوکس ہیں۔

پاک فضائیہ کے موجودہ سربراہ ائیر چیف مارشل سہیل امان نے یومِ پاکستان کی پریڈ کے دوران جدید لڑاکا طیارہ اڑا کر اور ضربِ عضب کے دوران پاک فضائیہ کے لڑاکا طیاروں کی فارمیشن کی قیادت کرتے ہوئے دہش گردوں پر کاری ضرب لگا کر اس عزم کا اعادہ کیا کہ دفاعِ پاکستان اور تحفظِ پاکستان کے لیے پاک فضائیہ کا ہر ائیر مین پوری طرح چوکس اور تیار ہے۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *