17 808x454

ایک ماہ نور ہر آنکھ کا نور بن گئی ہے

2329 views

سندھ کے ادبی علاقے نوشہروفیروز کے گاؤں محمد بچل مہر سے تعلق رکھنے والی ماہ نور شیخ 200 سے زائد بچوں کی امید بن چکی ہیں ماہ نور شیخ سندھ یونیورسٹی جامشورو میں شعبہ ایجوکیشن کی طالبہ ہیں جو اپنے گاؤں کے بچوں کے لیے سکول چلا رہی ہیں

ثناءاللہ ہاشمانی

راوا کے خصوصی نامہ نگار ثناءاللہ ہاشمانی سے بات کرتے ہوئے ماہ نور نے بتایا کہ جب پاکستان میں کورونا کے باعث تعلیمی ادارے بند کردیے گئے تو میں گھر آکے بیٹھ گئی ایسے میں جب صورتحال قابو سے باہر ہوتی گئی اور حکومت کے پاس بھی تعلیمی سرگرمیاں جاری رکھنے کا کوئی خاص لائحہ عمل نہیں تھا تب  میں نے سوچا کہ وقت ہاتھ پے ہاتھ رکھ کے بیٹھنے کا نہیں ہے۔ اس وقت میں گھر سے باہر نکلی ،گاؤں گاؤں گئی۔ دیکھا اسکول بند ہونے کی وجہ سے بچےگلیوں میں کھیلتے اور قبرستان میں فاتحہ  پڑھنے کے لیے آنے والے لوگ گاؤں کے بچوں کو بھیک دے رہے ہیں جو دیکھ کر مجھے تکلیف محسوس ہوئی۔

انہوں نے بتایا کہ جیب خرچ سے محدود پیمانے پر اسکول کا آغاز کیا کتابیں، پینلسیں اور دیگر سامان بچوں کو فراہم کیا اور آج ان کے ادارے کو ایک سال مکمل ہوچکا ہے۔

 یہ پڑھیں : تعلیمی نظام پر کورونا کا جان لیوا حملہ

ماہ نور کے مطابق اسکول میں 200 سے زائد طلبا و طالبات زیرتعلیم ہیں جہاں پر نرسری سے میٹرک تک کی تعلیم دی جاتی ہے  جبکہ جگہ  کی تنگی کی وجہ سے دوپہر دو بجے سے رات آٹھ بجے تک شفٹوں میں کلاسز چلائی جاتی ہیں

ماہ نور نے بتایا کہ اس ایک سال کے دوران کچھ ایسے بھی طالبِ علم ملے جو ان کی مدد کرتے ہیں اور مختلف جماعتوں کو پڑھاتے ہیں

فیملی سپورٹ کے حوالے سے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میرے شوہر نے میری مدد کی اور والد صاحب نے حوصلہ دیا جن کا ابھی 5 ستمبر 2021 کو انتقال ہوا ہے ان ہی کی بدولت آج یہ  سب کچھ ممکن ہوا ہے۔

 یہ بھی پڑھیں : مستقبل کے معماروں کا مستقبل خطرے میں ہے ۔۔

ماہ نور نے بتایا ہے کہ جگہ کی تنگی کی وجہ سے کچھ والدین سے معذرت کرنی پڑی تو میں نے (ایم ڈی سیف ) کو درخواست دی کہ ان کے اسکول کو رجسٹرڈ کیا جائے اور اسکول کی عمارت بنوانے میں مالی مدد کی جائے تاحال اب تک اس اپیل کا کوئی جواب نہیں آیا

اسکول کے مستقبل کے حوالے سے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان میں حق مانگنے والے بہت ہیں مگر قربانی دینے والا اور زمہ داری لینے والا کوئی نہیں۔ انہوں نے بتایا کہ وہ  نہ صرف اسکول جاری رکھیں گی بلکہ اسکول کی ترقی کے لیے کوشاں رہیں گی۔۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *