2 20 808x454

بھارتی وزیر اعظم کی جھوٹی تصویر، نیویارک ٹائمز نے بھانڈا پھوڑ دیا۔

41 views

بھارتی وزیر اعظم نریندرمودی سوشل میڈیا پر ٹاپ ٹرینڈ میں ہوں تو کوئی تعجب نہیں ہوتا بلکہ یہی خیال آتا ہے کہ اب کیا نیا کیا ہے جناب نے جس کے چرچے ہیں ۔

صبحین عماد

اب بھی جو وزیر اعظم کبھی یوگا تو کبھی مور کے ساتھ فوٹوشوٹ کرواتے نظر آئیں تو ان سے کیسے کچھ اچھی امید رکھیں جی ہاں اس بار بھی ایسا ہی ایک کارنامہ بھارتی سوشل میڈیا ہر ٹرینڈ کی صورت میں خوب وائرل ہو رہا ہے

بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب اور امریکی قیادت سے ملاقاتوں کے موقع پربھارت کی طرف سے انسانی حقوق کی بڑے پیمانے پر پامالیوں کے خلاف احتجاج کے اثرات کو کم کرنے کے لئے بھارتی سوشل میڈیا نیویارک ٹائمز کی جعلی نیوز رپورٹ کا ڈھول پیٹنا رہا اور مودی کی تصویر کے ساتھ من گھڑت خصوصی رپورٹ کو سوشل میڈیا اکائونٹس کے ذریعے بڑے پیمانے پر پھیلایا گیا رپورٹ تو تھی ہی جھوٹی اس پر تصویر کے ساتھ یہ بھی لکھ دیا کہ مودی دنیا کی آخری امید ہیں بھارتی میڈیا نے اس خبر کو اتنا اچھالا کہ  جس پر اس معروف اخبار کو خود ہی  وضاحت جاری کرنا پڑی۔

نیویارک ٹائمز کمیونیکیشنز نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی پھیلائی جانے والی کئی تصاویر کی طرح یہ بھی مکمل طور پر ایک من گھڑت تصویر ہے ۔ادارے کی طرف سے اس موقع پر ایک لنک بھی جاری کیا گیا اور بتایاگیا کہ نیویارک ٹائمز کے قارئین اس لنک پر نریندر مودی بارے اخبار کی حقیقی رپورٹنگ خود ملاحظہ کر سکتے ہیں۔

ٹویٹ

واضح رہے کہ نیویارک ٹائمز کے نام کو استعمال کرتے ہوئے صفحہ اول پر بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کی بڑی تصاویر بھارتی سوشل میڈیا اکائونٹس فیس بک، ٹویٹر، انسٹا گرام، واٹس ایپ گروپوں میں وائرل کی گئیں جہاں نریندرا مودی کی بھارت کا سرفخر سے بلند کرنے پر تعریفوں کے پل باندھے جارہے ہیں۔

مودی کے 24اور 25 ستمبر کو امریکہ کے دورے کے حوالے سے نیویارک ٹائمز کے 26ستمبر ، 2021 کے جعلی ایڈیشن میں وزیرا عظم مودی کی بڑی تصویر کے سکرین شاٹ میں ” دنیا کی آخری اور بہترین امید“ اور ”دنیا کے سب سے زیادہ پسندیدہ اور طاقت ور لیڈر“ کی شہ سرخی اور ذیلی سرخی بھی دکھا ئی گئی

‏ ‏نیو یارک ٹائمز کے صفحہ اول پر ردوبدل کرتے ہوئے نریندرا مودی تصویر کو ٹویٹر، فیس بک اور واٹس ایپ گروپ چیٹ میں ” مجھے وزیر اعظم پر فخر کے ہے “ کے پیغام کے ساتھ بڑے پیمانے پر پھیلایا گیا۔ مودی کی ایک تصویر کو ” مودی جی امریکہ کے سب سے بڑے اخبار کے صفحہ اول پر، اس سے زیادہ فخر کی اور کیا بات ہوسکتی ہے“ کے پیغام کے ساتھ سب سے زیادہ شیئر کیا گیا۔ دوسری جانب پاکستان کے وزیر اعظم عمران جن کی تصویر نیوز ویک کے صفحہ اول پرشائع کی گئی، کو عالمی میڈیا نے سب سے زیادہ کوریج دی جبکہ امریکی میڈیا کی طرف سے وزیر اعظم نریندرا مودی کو مکمل نظر انداز کیا گیا۔

جعلی خبر کی اصل کہانی

حقیقت میں نیو یارک ٹائمز کے 26 ستمبر ایڈیشن کے صفحہ اول پر وزیر اعظم نریندرا مودی کی کوئی خبر شائع ہی نہیں کی گئی ۔سوشل میڈیا پوسٹوں میں جعلی پوسٹ کا کوئی لنک شیئر نہیں کیا گیا اور تصویر پر سرسری نظر ڈالنے سے بھی یہ واضح ہوجاتا ہے کہ یہ خود ساختہ اور جعلی تصویر ہے۔

مودی کی جعلی تصویر میں سرخی کے فونٹ نیو یارک ٹائمز کے فونٹ سے مطابقت نہیں رکھتے جبکہ جعلی خبر کی تاریخ کے ہجے بھی غلط ہیں ۔

وزیرا عظم نریندرا مودی کی تصویر سب سے پہلے ’’زی نیوز ‘‘میں گزشتہ مہینے ” وزیر اعظم نریندرا مودی میری ٹائم سیکورٹی میں اضافہ کےلئے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اعلیٰ سطح کے مباحثے کی صدارت کریں گے‘‘ کے عنوان سے شائع ہوئی تھی۔سوشل میڈیا ہنڈلز پر ان جعلی خبروں نے بھارت میں ہنگامہ کھڑا کردیا جہاں مودی کے ناقدین نے ایک اور فیک نیوز پر بی جے پی کی دھجیاں اڑا دیں۔

گزشتہ سالوں کے دوران بھارت کے انٹیلی جنس نیٹ ورک کی طرف سے بھارتی میڈیا اور سوشل میڈیا ہینڈلز کی طرف سے مسلسل فیک نیوز چلائی جارہی ہیں۔ایک ٹویٹر ہینڈل نے فیک نیوز پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ” یہ نیو یارک ٹائم نہیں، یہ نیویوگی ٹائمز ہے۔

یہ دنیا کےلئے آخری امید نہیں بلکہ مودی کے برسر اقتدار آنے کے بعد بھارت کی آخری امید ہے۔

اپنے مائی باپ مودی کو بڑھا چڑھا کر پیش کرنے کےلئے وہ جعلی نیویارک ٹائمز کی کور سٹوری گھڑنے سے بھی نہیں ہچکچائےاور اتنی پھرتی دکھائی گئی کہ انہوں نے اشاعت کی تاریخ ستمبر کے ہجے ہی غلط لکھ ڈالے ۔وادی پنج شیر میں طالبان کے خلاف قومی مزاحمتی محاذ سے لڑنے کےلئے پاک فضائیہ کا طیارہ استعمال ہونے کے بارے میں بھی حال ہی میں جھوٹی خبروں کو بعض سر کردہ بین الاقوامی چینل نے نشر کیا جس سے بھارتی میڈیا کی طرف سے حقائق کو مجروح کرنے کی حقیقت بری طرح آشکارہوئی ۔

ٹویٹ

ای یو ڈس انفولیب کے انکشافات نے بھارت کی طرف سے فیک نیوز چلانے والے اداروں کو بے نقاب کیا جس میں چین اور پاکستان جیسے علاقائی ممالک کو مخصوص مفادات کےلئے ہدف بنایاگیا۔ حقیقت یہ ہے کہ وزیراعظم نریندرا مودی کے دورہ امریکہ کے خلاف امریکہ میں بڑے پیمانے پراحتجاجی مظاہرے ہوئے۔

source: social mediaa
content: sabheen ammad

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *