6 6 808x454

آخر یہ انٹرنیٹ سروس آئے روز ڈاؤن کیوں ہو رہی ہے؟

49 views

گیارہ  اکتوبر کی شام پاکستانی انٹرنیٹ صارفین کو اس وقت مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جب انٹرنیٹ کا مواصلاتی نظام نہایت آہستہ ہو گیا۔  سست  رفتار  سروس  کے  باعث  جہاں  صارفین  کوفت  کا  شکار  ہوئے  وہیں  یہ  سوال  بھی  پوچھا  گیا  کہ  آخر  یہ  سروس  ڈاؤن  بار  بار  ہوتی  ہی  کیوں  ہے؟

تحریر:  حرا  خالد
ترتیب و تدوین: صبحین عماد

ذرائع  کے  مطابق  گزشتہ  شب انٹرنیٹ کی رفتار میں اچانک آنے والی کمی کی بنیادی وجہ 25 ہزارکلومیٹر طویل ایشیا یورپ ڈبل اے ای ون کیبل میں خرابی  تھی  ۔  ٹیلی کام ذرائع کے مطابق 40 ٹیرا بائیٹ کی اہم ترین زیر آب کیبل فجیرا کے قریب خراب ہو گئی جس کے باعث پاکستان میں انٹرنیٹ سپیڈ سست روی کا شکار ہوئی۔

انٹرنیٹ  صارفین  صبر  کا  دامن  تھام  لیں  کیونکہ  پاکستان  ٹیلی  کمیونکیشن  کمپنی  کے  ترجمان  کے  مطابق 40 ٹیرابائیٹ  کی  اس کیبل کی مرمت میں کئی دن لگ  سکتے  ہیں۔  کیبل  کی  مکمل  مرمت  تک  انٹرنیٹ ڈیٹا ٹریفک کو دیگر کم گنجائش والے کیبلز پر منتقل کیا جا رہا ہے۔

 یہ بھی پڑھیں: انٹرنیٹ کا بڑا بریک ڈاؤن: متعددغیرملکی ویب سائٹس متاثر

یاد  رہے  کہ  گزشتہ  ہفتے ہی دنیا بھر میں انسٹاگرام، فیس بک اور واٹس ایپ کی سروس ڈاؤن ہو گئی تھی  اور پاکستان اور بھارت سمیت دنیا بھر دو  ارب  پچاسی  کڑور صارفین  کو شدید پریشانی کا  سامنا  کرنا  پڑا  تھا۔

انٹرنیٹ  سروس  کی  سست  روی  یا  مکمل  معطلی  جہاں  فنی  خرابی  کی  وجہ  سے  ہوتی  ہے  وہیں  بعض  اوقات  کسی  سمندری  جانور  کی  اٹھکیلیاں  بھی  کیبلز  کو  نقصان  پہنچانے  کا  باعث  بنتی  ہیں۔  سن  2018 میں  بھی  ایک  شارک  نے  زیر  سمندر  کیبلز  کو  نقصان  پہنچایا  تھا  جسکی  وجہ  سے  سروس  پورے  دو  روز  تک  معطل  رہی  تھی۔

سروس  میں  معطلی  بعض  اوقات  حکومتی  یا  عسکری  احکامات  پر  بھی  ہوتی  ہے  جیسا  کہ عموماً  عاشورہ  کے  دنوں  میں  دیکھنے  کو  ملتا  ہے۔  اسکے  علاوہ انٹرنیٹ سروسز میں خلل ایسے وقتوں میں  بھی ڈالا جاتا ہے جب ملک میں کوئی احتجاجی مہم یا حکومت  مخالف  ریلیاں نکالی جا رہی ہوتی ہیں۔

ڈجیٹل حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیم ایکسیس ناؤ  کی جانب سے اکٹھے کیے  گئے اعداد و شمار کے مطابق 2019 میں 33 ممالک میں دانستہ طور پر 200 بار انٹرنیٹ کی سروسز بند کی گئیں۔ اسی  ایک  سال  میں  دنیا بھر میں 60 بار مظاہروں اور 12 مرتبہ انتخابات کے دوران انٹرنیٹ بند کیا گیا۔

 بعض  اوقات  موسمی  تبدیلیاں  اور  یا  کوئی قدرتی  آفت  بھی  انٹرنیٹ  سروس  کی  فراہمی  میں  معطلی  کا  باعث  بنتی  ہے۔ سال  2020  میں  آنے  والے  سمندری  طوفان  لارا  نے  بھی  انٹرنیت  سروس  کی  بلا  تعطل  فراہمی  میں  رکاوٹ  پیدا  کی  تھی۔

گزشتہ  سال  کے دسمبر  میں گوگل  سرور  کریش  ہونے  کے  باعث  یوٹیوب  ،  جی  میل  اور  گوگل  میٹ  جیسی  اہم  سائٹس  کے  صارفین  کو  شدید  مشکلات  کا  سامنا  کرنا  پڑا  تھا۔   یاد  رہے  کہ  یہ  کرونا  لاک  ڈاؤن  کا  وہ  زمانہ  تھا  جب  زیادہ  تر  کاروباری  اور  تعلیی  سرگرمیاں  آن  لائن  انجام  دی  جا  رہی  تھیں۔

انٹرنیٹ  سروس  کی  فراہمی  میں  کسی  بھی  قسم  کا  تعطل  یا  سست  روی  جہاں  صارفین  کے  لئے  وقتی  پریشانی  اور  کوفت  سا  باعث  بنتا  ہے  وہیں  کاروباری  سرگرمیاں  متاثر  ہونے  سے معیشت  کو کروڑوں  روپے  کا  نقصان  بھی  اٹھانا  پڑتا  ہے۔

SOURCE : Media sites

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *