8 Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered Recovered 808x454

عوام پر پٹرول بم گرانے کی تیاریاں مکمل، اعلان 16 اکتوبر کو

96 views

تبدیلی  سرکار  نے  اپنی  روایت  برقرار  رکھتے  ہوئے  ایک  بار  پھر  عوام  پر  پٹرول  بم  گرانے  کی  تیاریاں  کر  لی  ہیں۔  فلاحی  ریاست  کا  نعرہ  لگانے  والے  عمران  خان  اور  انکی  حکومت  مہنگائی  کے  جن  کو قابو  کرنے  میں  مکمل  ناکام  ہو  چکی  ہے ۔  پیٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  میں  آئے  روز  کے  اضافے  سے  پریشان غریب  عوام  دہائیاں  دے  رہے  ہیں  کہ  خان  صاحب  وہ  وعدے  کیا  ہوئے؟

تحریر:  حرا  خالد

 تبدیلی  سرکار نے  پٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  میں  ایک  بار  پھر  بڑے  اضافے  کا  عندیہ  دے  دیا  ہے۔  ذرائع  کے  مطابق  پٹرول  کی  قیمت  میں  سات  روپے فی  لیٹر اور  ہائی  اسپیڈ  ڈیزل  کی  قیمت  میں دس  روپے  فی  لیٹر  تک اضافہ  کیے  جانے  کا  امکان  ہے۔  ممکنہ  اضافے  کا  اطلاق  16  اکتوبر  سے  ہوگا۔

پیٹرول  کی  فی  لیٹر  قیمت  اس  اضافے  کے  بعد    134  روپے  اور  ڈیزل  کی  قیمت  132  روپے  روپے  فی  لیٹر  تک  ہو  جانے  کا  امکان  ہے۔قیمتوں  میں  اضافے  کی وجہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی بڑھتی  ہوئی مانگ اور سپلائی میں کمی کے ہے  جسکی  وجہ  سے قیمتیں 7  سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ   گئی ہیں۔

تحریک  انصاف  کی  حکومت  پچھلے  ایک  ماہ  میں  دو  بار  پٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  میں  اضافہ  کر  چکی  ہے۔  16  ستمبر  کو  پٹرول  کی  قیمت  میں  9  روپے  اور  ہائی  اسپیڈ  ڈیزل  کی  قیمت  میں 7  روپے  فی  لیٹر  اضافہ  کیا  گیا  تھا ۔  صارفین  ابھی  اسی  دھچکے  سے  سنبھلنے  نہ  پائے  تھے  کہ  یکم  اکتوبر  کو  ایک  بار  پھر  قیمتوں  میں  اضافہ  کیا  گیا  اور  پٹرول  کی  قیمت  4  روپے  مزید  اضافے  کے  بعد 127.30  روپے  اور  ڈیزل  کی  قیمت  دو  روپے  اضافے  کے  بعد  122.05 روپے  فی  لیٹر  ہو  گئی۔

اگر  حکومت  16  اکتوبر  کو  قیمتوں  میں  ایک  بار  پھر  اضافہ  کرتی  ہے  تو  یہ  تھوڑی  سی  مدت  مین  تیسرا  بڑا  اضافہ  ہوگا  اور  اس  پر  صارفین  کی  جانب  سے  شدید  ردِعمل  متوقع  ہے۔واضح  رہے  کہ  حکومت  اوگرا  کی  جانب  سے  تجویز  کردہ  قیمتوں  کے  مطابق  ہی  قیمتوں  میں  اضافے  یا  کمی  کا  اعلان  کرتی  ہے۔

اعداد  و  شمار  کے  مطابق  پاکستان  میں  پیٹرول  کی  ماہانہ  کھپت  سات  لاکھ  پچاس  ہزار  ٹن  اور  ہائی  اسپیڈ  ڈیزل  کا  ماہانہ  استعمال  تقریباً  آٹھ  لاکھ  ٹن  ہے۔  اور  یہ  حکومت  کو  ایک  بڑا  سرمایہ  فراہم  کرنے  کا  ذریعہ  ہیں۔

صنعتی  ماہرین  کا  کہنا  ہے  کہ  پٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  میں  اضافے  کی  بڑی  وجہ  روپے  کی  ڈالر  کی  مقابلے  میں  مستقل  گراوٹ  ہے۔ ڈالر  کی  قیمت  اس  وقت  171.42  پاکستانی  روپے  ہے  اور  اسمیں  ہر  گزرتے  دن  کے  ساتھ  مستقل  اضافہ  ہو  رہا  ہے۔

قیمتوں  میں  اضافے  کی  ایک  اور  بڑی وجہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی بڑھتی  ہوئی مانگ اور سپلائی میں کمی کے ہے۔  بین  الاقوامی  نیوز  ایجنسی  کی  رپورٹ  کے  مطابق  خام  تیل  کی  قیمت  سن  2014  کے  بعد  پہلی  بار  80  ڈالر  سے  بڑھ  گئی  ہے۔  تیل  کی  مانگ  میں  اضافے  اور  سپلائی  میں  کمی  کے  باعث  قیمتوں  میں رواں  سال  60  فیصد تک اضافہ  ہوا  ہے ۔

 ماہرین کے  مطابق جب تک او  پی  ای  سی  کی  جانب  سے عملی طور پر  تیل سپلائی بڑھانے کے لیے اقدامات  نہیں  کیے  جاتے قیمتیں زیادہ ہی  رہیں گی۔

:عوام  کا  ردِعمل

پیٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  میں  مستقل  اضافے  پر عوام  پریشانی  کا  شکار  ہیں  اور  حکومت  کو  کڑی  تنقید  کا  نشانہ  بنایا  جا  رہا  ہے۔ سوشل  میڈیا  صارفین حکومت  کو  پرانے  وعدے  یاد  دلا  کر  بڑھتی  ہوئی  قیمتوں  اور  مہنگائی  پر  دہائی  دے  رہے  ہیں۔

حزبِ  اختلاف  کی  جماعتوں  کی  جانب  سے  بھی  حکومت  کو  تنقید  کا  نشانہ  بنایا  جا  رہا  ہے۔  سینیٹر  شیری  رحمان  نے  اپنی  ٹویت  میں  کہا  ہے  کہ  حکومت  تیس  دن  کے  اندر  اندر  قیمتوں  میں  تیسری  بار  اضافہ  کرنے  جا  رہی  ہے۔  عوام  کے  لئے  تو  یہ  اضافے  سونامی  کی  صورت  اختیار  کر  گئے  ہیں۔

دوسری  جانب  وفاقی  وزراء  علی  حیدر  زیدی   اور  حماد  اظہر نے  دنیا  بھر  کے مختلف  ممالک  میں  پیٹرول  کی  قیمتوں  کا  پاکستان  میں  پٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  سے  موازنہ کرتے  ہوئے  لکھا  ہے  کہ  پیٹرول  تو  اب  بھی  پاکستان  میں  سب  سے  سستا  ہے۔

اس  ٹویٹ  کے  جواب  میں  سوشل  میڈیا  صارفین  یہ  سوال  کر  رہے  ہیں  کہ  کیا  پاکستان  میں  فی  کس  آمدنی  بھی  دیگر  ممالک  کے  برابر  ہے؟

عالمی  مارکیٹ  میں  قیمتوں  میں  اضافے  کے  باعث  ہندوستان  میں  بھی  پیٹرول  اور  ڈیزل  کی  قیمتوں  میں  اضافہ  ہوا  ہے  اور  وہاں  بھی  عوام  کی  جانب  سے  اس  پر  شدید  ردِ  عمل  دیا  جا  رہا  ہے۔

پیٹرولیم  مصنوعات  کی  قیمتوں  میں  آئے  روز  کا  یہ  اضافہ  جہاں  غریب  عوام  کے  لئے  پریشانی  کا  باعث  بن  رہا  ہے  وہیں  مہنگائی  اور  کرایوں  میں  بھی  مستقل  اضافہ  ہو  رہا  ہے۔  غربت  اور  مہنگائی  کی  چکی  میں  پسے  عوام  ایسی  تبدیلی  سے  نالاں  ہیں  جس  نے  انہیں  سوائے  مہنگائی  ،  بے  روزگاری  اور  جھوٹے  وعدوں  کے  کچھ  نہیں  دیا۔ حکومتی  وزراء  کی  ڈھٹائی  بھی  یہ  واضح  کرنے  کے  لئے  کافی  ہے  کہ  تبدیلی  سرکار  کو  عوام  کا  کتنا  احساس ہے۔

طویل  لاک  ڈاؤن کے  باعث   کاروبارِ  زندگی  متاثر  ہونے  کے  بعد  حکومت  کا  یہ  فرض  تھا  کہ  عوام  کو  ریلیف  دیا  جاتا  لیکن  یہاں  تو  خان  صاحب  پہلے  ہی  بتا  چکے  ہیں  کہ  سکون  صرف  قبر  میں  ہے لہذا عوام  اس  سے  پہلے  سکھ  کے  سانس  کی  توقع  نہ  رکھے۔

Source: Media Reports

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *