REHAM 1 808x454

ریحام خان کو زلفی بخاری سے معافی کیوں مانگنی پڑی؟ جانیے اصل کہانی

173 views

ریحام  خان  نے  سابق  معاونِ  خصوصی اور  عمران  خان  کے  قریبی  ساتھی  زلفی  بخاری پر  لگائے  گئے  بے  بنیاد  الزامات  پر غیر  مشروط  معافی  مانگ  لی  ہے  اور  ہرجانہ  ادا  کرنے  پر  بھی رضامندی  کا  اظہار  کیا  ہے۔

تحریر :  حرا  خالد

وزیراعظم  عمران  خان  کی  سابق  اہلیہ  ریحام  خان  آئے  روز متنازعہ خبروں  کا  حصہ  بنی  رہتی  ہیں  اور  عموماً  یہ  خبریں  انکی  شہرت میں  کسی  اچھے  اضافے  کا  باعث  نہیں  ہوتیں۔ انکی  جانب  سے کبھی  کتاب  میں  لگائے  کسی جھوٹے  الزام  پر  معافی  تو  کبھی  اپنی  ویڈیوز  کے  ذریعے  عمران  خان  کے  قریبی  ساتھیوں  پر  لگائے  گئے  کرپشن اور  نااہلی کے  الزامات  پر  معافی  مانگنے اور  ہرجانہ  ادا  کرنے کی  اطلاعات  سامنے  آتی  رہتی  ہیں۔

اب  تازہ  ترین  یہ  ہے  کہ  ریحام  خان نے  عمران  خان  کے سابق  معاونِ  خصوصی  زلفی  بخاری  پر  لگائے  گئے الزامات  پر  ایک  لمبا  چوڑا  معافی  نامہ  اور  ویڈیو  جاری  کی  ہے  جس  میں  اس  بات  کا  اعتراف  کیا  ہے  کہ  ان  کی  جانب  سے  لگائے  گئے  تمام  الزامات  غلط  اور  بے  بنیا د  تھے  اور  انکی  وجہ  سے  زلفی  بخاری  کی  شہرت  اور  ساکھ  کو  نقصان  پہنچا  جس  پر  وہ  غیر  مشروط  معافی  مانگتی  ہیں  اور  ہتکِ  عزت  اور  قانونی چارہ  جوئی  کی  مد  میں  رقم  ادا  کرنے  کے  لئے  بھی  تیار  ہیں۔

عدالتی دستاویزات کے مطابق زلفی بخاری نے ریحام خان پر لندن ہائی کورٹ میں اس وقت مقدمہ دائر کیا تھا  جب لندن میں مقیم ریحام خان نے 6 اور 7 دسمبر 2019 کو اپنے یو ٹیوب چینل، فیس بک اور ٹویٹر پر ویڈیو جاری کی اور ٹوئٹس اور ری ٹوئٹس بھی کئے جن میں  یہ الزام لگایا کہ  زلفی  بخاری وزیراعظم پاکستان کے ساتھ نیویارک میں روز ویلٹ ہوٹل کو اپنے فائدے کیلئے کم قیمت پر فروخت یا حاصل کرنے کے کرپٹ منصوبے میں شامل  ہیں۔  ریحام  خان  کی  جانب  سے  زلفی  بخاری  پر  اقراباء  پروری  ،  دھوکہ  دہی  ،  جعلی  دستاویزات  اور  کرونا  وبا  کے  دوران  نااہلی  کے  باعث  لاکھوں  پاکستانیوں  کی  زندگی  خطرے  میں  ڈالنے  کا  الزام بھی لگایا  گیا  تھا۔

مقدمہ  دائر  ہونے  کے  بعد  ابتدائی سماعت میں ریحام خان نے موقف اپنایا  تھا کہ  انہوں  نے عوامی مفاد میں قومی اثاثوں کی فروخت کا معاملہ اٹھایا۔کسی سی ذاتی دشمنی نہیں  تھی  اور  اس  کیس میں زلفی بخاری کی حیثیت کو نقصان نہیں پہنچا ۔  جو کہا عوامی مفاد میں تھا۔  جج نے ریحام خان کی وضاحت  کو مسترد کرتے  ہوئے زلفی بخاری کا مؤقف تسلیم کیا تھا۔

اب  مقدمے  کا  فیصلہ  زلفی  بخاری  کے  حق  میں  آنے  کے  بعد  ریحام خان تحریری  اور  ویڈیو  بیان  میں کہا  ہے کہ وہ زلفی بخاری کو ہونے والی پریشانی اور شرمندگی پر غیر مشروط معافی مانگتی ہیں اور وہ ہرجانے اور قانونی اخراجات ادا کرنے کیلئے تیار ہیں۔ دونوں فریقین کے درمیان طے ہونے والے  معاملے کے مطابق ریحام خان نے اس بات پر اتفاق کیا ہے کہ وہ اپنی معافی اور وضاحت اردو اور انگریزی میں ٹویٹ کریں گی جو مسلسل تین دن تک ان کے ٹوئٹر اکائونٹ پر سب  سے  اوپر  موجود  رہے گی اور اردو اور انگریزی میں یہ معافی نامہ یو ٹیوب چینل اور فیس بک پیج پر بھی لگایا جائے گا۔

ریحام خان نے زلفی بخاری کو مقدمے کے اخراجات اور ہرجانے کے طور پر50ہزار پونڈ ادا کرنے پر  بھی رضامندی ظاہر کی ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بھی  اس  معاملے  پر  سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنا  مؤقف  دیتے  ہوئے  کہا  کہ برطانوی عدالت نے ریحام خان کو زلفی بخاری پر جھوٹے  الزامات عائد کرنے پر ہرجانے اور معافی مانگنے کا حکم دیا، اس طرح کا  قانون پاکستان میں لانے کو  آزادی اظہار  کیخلاف کہا  جاتا  ہے، اس طرح کا  قانون لانے  کی کوشش پر میڈیا مالکان مہم شروع کر دیتے ہیں، بہرحال ریحام کا  جھوٹا  ہونا  ایک بار پھر ثابت ہوا دراصل وہ عادی جھوٹی ہے۔

تحریک  انصاف  کے  آفیشل  ٹویٹر  اکاؤنٹ  نے  بھی  ریحام  خان  کی  ویڈیو  ٹویٹ  کی۔ ریحام  خان  ایکسپوزڈ  پاکستان  میں  ٹویٹر  ٹرینڈ  بھی  بنا  رہا  جس  میں  سوشل  میڈیا  صارفین  ریحام  خان  کو  کڑی  تنقید  کا  نشانہ  بناتے  رہے۔

اس  سے  قبل  ریحام  خان  نے  دسمبر  2020 میں  وزیراعظم  کے  دوست  انیل  مسرت  سے  بھی  معافی  مانگی  تھی  ۔  ریحام خان نے  انیل  مسرت  پر  یہ  الزام  لگایا  تھا  کہ وہ روزویلٹ ہوٹل کی خفیہ خریداری میں ملوث ہیں اور وزیراعظم عمران خان سے تعلق کی وجہ سے ہوٹل کی مبینہ فروخت سے ناجائز فوائد حاصل کر رہے ہیں  جس  پر  انیل  مسرت  نے  عدالتی  کاروائی  کرنے  کا  اعلان  کیا  تھا۔ریحام  خان نے   اپنے  معافی  نامے  میں  کہا  تھا   کہ میں یو ٹیوب چینل ریحام خان آفیشل کی آپریٹر ہوں اور 6  دسمبر 2019  کو پوسٹ کی گئی ایک ویڈیو میں انیل مسرت کا حوالہ دیا تھا اور میں نے انیل مسرت کے بارے میں متعدد ریمارکس اور غیر ضروری تبصرہ کیا۔ اس میں ترمیم کی خواہش پر میں نے وڈیو ہٹا دی ہے اور میں مکمل طور پر اپنا تبصرہ واپس لیتے ہوئے مسٹر مسرت، ان کے بزنس اور ان کے مخیرانہ کاز کو پہنچنے والے نقصان پر معافی چاہتی ہوں۔ میں اس معاملہ کے بارے میں مزید کوئی تبصرہ نہیں کروں گی۔

Source: Media reports.

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *