bilawal 2 808x454

بلاول صاحب  کیا آپ  نے  میڈیا  کو  بھونکنے  والا  کہا؟

87 views

حقیقت  ہے  کہ  انسان  اپنی  زبان  سے  پہچانا  جاتا  ہے  اور  لبوں  سے  لفظ  ادا  ہوتے  ہی  انسان  کی  تعلیم  ،  تربیت  اور  نفاست  کا  حال  معلوم  ہو  جاتا  ہے۔  اچھی  زبان  و  بیان  جہاں  انسان  کی  شخصیت  میں رعب  اور وقار  کا  اضافہ  کرتی  ہے  وہیں  بعض  اوقات  منہ  سے  نکلا  ایک  نامناسب  لفط  ہی  کسی  بھی  شخصیت  کے  بارے  میں  بنے  اچھے  تاثر  کے  مجسمے  کو  چکنا  چور  کر  دیتا  ہے۔

تحریر:  حرا  خالد

پاکستانی  سیاست  میں  عامیانہ  زبان  اور  گالم  گلوچ  اب  بہت  عام  سی  بات  ہو  چکی  ہے۔  سیاستدان  بڑے  فخر  سے  مخالفین  کو  برے  القابات  سے  نوازتے  ہیں  اور  اپنے  جلسوں  میں  دھڑلے  سے  گلی  محلوں  کی  زبان  اور  اخلاقی  معیار  سے  گرے  ہوئے  الفاظ  استعمال  کرتے  ہیں۔

حال  ہی  میں  بلاول  بھٹو  زرداری  نے  سانحہ  کارساز  کی  برسی  کے  موقعے  پر  منعقدہ  جلسے  سے  خطاب  کرتے  ہوئے  کہا  ہے  کہ  “میری  اس  ملک  کے  عوام  سے  اپیل  ہے  آپ  اس  میڈیا  کی  کردار  کشی  پر  یقین  نہ  کریں،  اپ  پاکستان  پیپلز  پارٹی  کے  خلاف  بھونکنے  والوں  کی  باتوں  پر  نہ  چلیں،  آپ  ہماری  تاریخ  یاد  رکھیں۔”

بلاول  صاحب  کیا  آپ  نے  میڈیا  کو  بھونکنے  والا  کہا؟  جناب  والا  یہ  وہی  میڈیا  ہے  جس  کے  بارے  میں  آپ  نے  کہا  تھا کہ  پاکستان میں اگر آج جمہوریت موجود ہے تو اس میں صحافیوں کا خون پسینہ شامل ہے ۔  یہ  وہی  میڈیا  ہے  کہ جب جنرل ضیاالحق نے ملک پر بدترین آمریت مسلط کی تھی تو یہی  قلم کے مزدور  اور  صحافی بیگم نصرت بھٹو اور آپکی  والدہ شہید بینظیر بھٹو کے ساتھ شانہ بشانہ کھڑے تھے ۔  بخدا اس  میڈیا  کے  خلاف  آپ  سے  ایسی  عامیانہ  زبان  کی  توقع  نہ  تھی!

میڈیا  کو  کچھ  کہنے  سے  قبل  آپ رپورٹر اجے  لالوانی  کے  خون  کا  جواب  دیجیے  جسے  بے  دردی  سے  آپکے  صوبے  میں  قتل  کر  دیا  گیا۔  آپ  گلے  میں  تار  کا  پھندا  لگے صحافی عزیز  میمن  کے  قتل  کا  حساب  دیں۔  آپ  کی  حکومت  نے  صحافیوں  کو  کتنا  تحفظ  دیا؟  آپ  کی  پارٹی  کے  دورِ  حکومت  میں  صحافیوں  کے  ساتھ  ہونے  والے  وعدوں  کو  کتنا  پورا  کیا  گیا؟

بلاول  بھٹو آپ  نوجوان  سیاستدان  ہیں۔  بینظیر  بھٹو  کے  سیاسی  مشن  کو  آگے  بڑھانے  کا  نعرہ  لے  کر  اٹھے  ہیں۔ آپ  جس  سیاسی  جماعت  کے  سربراہ  ہیں  اسکا  وطیرہ  ایسی  سیاست  تو  کبھی  نہ  تھا۔  آپ  سے  تو  ہمیں  یہ  توقع  ہے  کہ  گالم  گلوچ  کے  اس  سیاسی  کلچر  کو  ختم  کریں  گے۔ باوقار  اور  مہذب  سیاست  کو  پروان  چڑھائیں  گے۔ افسوس آپ  بھی  پچھلوں  کے  نقشِ  قدم  پر  ہی  چل  پڑے! تنقید  کیجیے  مگر  تہذیب  کے  ساتھ  ورنہ  پھر  جواب  سننے  کا  حوصلہ  بھی  پیدا  کریں!

یہ  بات  یاد  رکھیے  کہ  ایسی  زبان  سے  شاید  آپ  وقتی  طور  پر  اپنے  جیالوں  کے  لہو  کو  گرما  دیں،  شہ  سرخیوں  کا  حصہ  بن  جائیں  لیکن  آپ  کا  سیاسی  قد  ہمیشہ  کے  لئے  چھوٹا  ہو  جائے  گا۔  آپکے  الفاظ  اپنی  قدر  کھو  دیں  گے اور  پھر  اپنی  سیاست  چمکانے  کے  لئے یہی  اندازِ  بیان  آپکی  مجبوری  بن  جائے  گا۔  لہذا  ٹھہر  کر  سوچیے  کہ  آپ  نے  اپنی  پہچان  کیا  بنانی  ہے؟  کیونکہ  آپ  کی  سیاست کے لئے تو  زندگی  پڑی  ہے۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *