12 4 808x454

مجھے صبر کی دعائیں نہ دو،شہید بچوں کے والدین کی سسکیاں سب کو رلا گئیں

152 views

اولاد  کا  دکھ تو والدین  کے  لئے  قیامت  ہوتا  ہے  اور  پھر  جب  اولاد  بھی  وہ  ہو  جسے  اپنے  ہاتھوں  سے  تیار  کرکے  یونیفارم  پہنا  کر  اسکول پڑھنے بھیجا  ہو اور  وہ  اپنے  ہی  لہو  میں  نہا  کر  ماں  کے  سامنے  آئے تو  پھر  بھلا  صبر  کیسے  آئے  اور  کیونکر  آئے۔۔۔

حرا  خالد

سانحہ  آرمی  پبلک  اسکول  کو  چھ  سال  گزر  گئے۔  کیس کی  کاروائی فائلوں  تلے  دب  گئی  ،  حکومتیں  بدل  گئیں ،  زندگی  اپنی  ڈگر  پر  چل  پڑی لیکن  کچھ نہ  بدلا  تو شہید  بچوں  کے والدین  کا  دکھ  جن  کی  ہر  ہر  سانس  میں  آہوں  اور  سسکیوں  کی  گونج  سنائی  دیتی  ہے۔

آج  سپریم  کورٹ  میں  کیس  کی  سماعت  کے  دوران  بھی  بچوں  کے  والدین  تصویریں  اٹھائے  موجود  تھے۔  سماعت  کے  دوران  والدین  کی  آہیں  اور  سسکیاں  ہر  دردِ  دل  رکھنے  والے  انسان  کو  اشکبار کر  گئیں۔

ایک  سو  بتیس  معصوم  شہداء  کے  والدین  پل  پل  کس  کرب  سے  گزر  رہے  ہیں  اسکا  اندازہ  آج  ایک  ماں  کی  میڈیا  کے  سامنے  آہ  و  بکا  سے  ہو  سکتا  ہے۔  شہید  کی  ماں  کو  جب  کسی  نے  صبر  کرنے  کا  کہا  تو  وہ  پھٹ  پڑیں۔

دکھیاری  ماں  بچے  کی  تصویر  سینے  سے  لگائے  یہ  کہتی  نظر  آئی  کہ  مجھے  صبر  کی  دعائیں نہ  دو  ،  صبر  آ  سکتا  تو  میں  کمبل  اوڑھے  گھر  میں  سو  رہی  ہوتی  ،  نہیں  چاہیے  مجھے  صبر  ،  مجھے  انصاف  چاہیے۔ مت  کرو  میرے  لیے  صبر  کی  دعائیں  ، مجھے صبر  سے  سکون  نہیں  مل  رہا ، سکون  ملے  گا  تو انصاف  سے  ملے  گا۔

اس  دوران  دیگر  شہید  بچوں  کے  والدین  بھی  اپنے  جگر  گوشوں  کی  تصویریں  سینوں  سے  لگائے  سسکتے  رہے۔

تصویرِ  غم  بنے  والدین  والدین  کی  سسکیاں  ہر  دیکھنے  والی  آنکھ  کو  اشکبار  کر  گئیں ۔  ہر  ایک  دردِ  دل  رکھنے  والے  شخص  کا  یہی  مطالبہ  ہے  کہ  اس  واقعے  کے  ذمہ  دار  ایک  ایک  فرد  کو  کڑی  سزا  دی  جائے  تاکہ  آئندہ  کبھی  ایسی  کالی  صبح  نہ  آئے  کہ  بچے  یونیفارم  پہنے  گھروں   سے  جائیں  اور  کفن  میں  لپٹ  کر  واپس  آئیں۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *