7 15 808x454

نظام‏ِ انصاف اور اداروں کا سرِعام تمسخر اڑاتی حسینائیں۔۔۔

95 views

قانون  اور  آئین  کی  بالادستی  کی  باتیں  تو  بہت  کی  جاتی  ہیں  لیکن ایسا  محسوس  ہوتا  ہے  کہ اسلامی  جمہوریہ  پاکستان  میں  قانون  صرف  غریب  کیلئے  ہے  ۔  امرائے  شہر  کے  لئے  تو  اسکی  حیثیت  کاغذ  کے  پنے  سے  بڑھ  کر  نہیں۔

حرا  خالد

ایف  آئی  اے  اور  کسٹم  اداروں  کا  سرعام  تمسخر  اڑاتی ٹک  ٹاکر حریم  شاہ  ہو  یا  پھر  منی  لانڈرنگ  میں  رنگے  ہاتھوں  پکڑے  جانے  والی ماڈل ایان  علی۔۔۔  حسینائیں  اور  انکے  پیچھے  موجود  خفیہ  ہاتھ  ہمیشہ  ہی  قانون  سے  جیت  جاتے  ہیں  اور  قانون  بے  بسی  کی  دیوار  بنا  رہ  جاتا  ہے۔

حال  ہی  میں  مشہور  و  معروف  ٹک  ٹاکر حریم شاہ نے اپنی ایک ویڈیو پوسٹ کی تھی جس میں وہ انٹرنیشنل  کرنسی پکڑے ہوئے دیکھی جا سکتی ہیں۔ حریم نے انکشاف کیا وہ  یہ  ساری  رقم  اپنے  ساتھ  پاکستان  سے یو  اے  ای لے  کر  آئی  ہیں اور  کسی  نے  ان  سے  کچھ  پوچھ  گچھ  بھی  نہیں  کی  کیونکہ  کسی  میں  اتنی  ہمت  ہی  نہیں  ہے۔ واضح  رہے  کہ اتنی رقم برطانیہ کی پروازوں میں لے جانے کی اجازت نہیں ہے۔

اس  ویڈیو  کے  منظر  عام  پر  آنے  کے  بعد  ایف  آئی  اے  بھی  متحرک  ہو  گئی  تھی  اور  حریم  شاہ  کے  خلاف  منی  لانڈرنگ  کی  تحقیقات  کا  آغاز  کرنے  کا  اعلان  کیا ۔ 14 جنوری کو وزیراعظم کے مشیر برائے احتساب شہزاد اکبر نے اعلان کیا تھا کہ فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) نے ٹک ٹاکر حریم شاہ کی ویڈیو کا نوٹس لیتے ہوئے معاملے کی انکوائری شروع کر دی  ہے۔

حریم شاہ کے خلاف کراچی میں ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ نے بھی انکوائری رجسٹرڈ کرکے تحقیقات کا آغاز کرنے  کا  اعلان  کیا  ہے۔

ایڈیشنل ڈائریکٹر ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ عمران ریاض نے کہا  کہ  حریم  شاہ  کی  یہ  ویڈیو  ،  سوشل میڈیا کا استعمال کرتے ہوئے حکومت پاکستان کے ساتھ ساتھ ریاستی اداروں کی تضحیک، خلل ڈالنے اور بدنام کرنے کا عمل ہیں۔ ان کا یہ عمل منی لانڈرنگ کے زمرے میں آتا ہے۔

لیکن  ٹک  ٹاکر  پر  اس  تحقیقات  کا  قطعی  کوئی  اثر  نہیں  ہوا  بلکہ  حریم  شاہ  نے  تو  شہزاد اکبر پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ وہ نواز شریف کی منی لانڈرنگ کی بات کرتے ہیں، ان کو تو یہاں سے ہلا نہیں سکے، وہ یہاں مزے سے بیٹھے اپنی زندگی کو انجوائے کررہے ہیں۔

ٹک  ٹاکر  کا مزید کہنا تھا کہ وہ شہزاد اکبر کے خط سے پریشان نہیں، بلکہ لندن میں اپنے قیام سے لطف اندوز ہو رہی ہیں۔

قانون  نافذ  کرنے  والے  اداروں  سے  ایسی  بے  خوفی  کے  پیچھے  بھی  ان  اداروں  کی  بے  بسی  کی  پوری  داستان  ہے  جس  نے  ایسے  خفیہ  ہاتھوں  اور  انکے  ہاتھوں  میں  کھیلتے  مہروں  کو  مزید  بے  خوف  کر  دیا  ہے۔ منشیات  اسمگلنگ  کیس  میں چیک  ریپلک  کی  ماڈل  ٹریزا  کی  رہائی  ہو  یا  پھر  منی  لانڈرنگ  میں  ایان  علی  کی  شاہی  مہمانداری۔۔۔  ادارے  حسیناؤں  کے  آگے  ہمیشہ  ہی  جھکتے  آئے  ہیں۔

منشیات  کیس  میں ساڑھے آٹھ  سال  قید  کی  سزا  پانے  والی  غیر  ملکی  ماڈل  ٹریزا  بھی  ڈھائی  سال  بعد  ہی  رہا  ہو  کر  اپنے  وطن  پہنچ  گئی  تھی۔ چیک ریپبلک کی ماڈل ٹریزا کو لاہور ائیرپورٹ سے دسمبر 2017 کو گرفتار کیا گیا تھا، جس کے بعد ٹریزا کے خلاف کسٹم حکام نے مقدمہ درج کیا۔ ٹرائل کورٹ نے غیرملکی ماڈل کو ساڑھے 8  سال قید کی سزا سنائی تھی  تاہم  لاہور ہائی کورٹ نے غیر ملکی ماڈل ٹریزا کو ڈھائی سال بعد ہی  رہا کرنے کا حکم دے دیا  تھا۔

 پاکستانی  ماڈل ایان علی کو اسلام آباد کے شہید بےنظیر بھٹو ایئرپورٹ سے حکام نے گرفتار کر کے ان سے پانچ لاکھ امریکی ڈالر برآمد کیے تھے۔  تاہم  صرف  چار  ماہ  جیل  میں  رہنے  کے  بعد  انکی  ضمانت  منظور  ہو  گئی  تھی  گو  کہ  ایان  پر  مقدمہ  ایک  عرصے  چلتا  رہا  لیکن  ماڈل  گرل  ایان  علی  کی  عدالت  میں  انٹری  اور  انکی  باڈی  لینگویج  ہی  بتا  رہی  ہوتی  تھی  کہ  انہیں  کسی  قسم  کا  خوف  لاحق  نہیں  ہے۔

دوسری  جانب  اسی  کیس  کے  چشم  دید  گواہ  کسٹم افسر اعجاز چوہدری  کو   قتل  کر  دیا  گیا  تھا۔مقتول کی بیوہ نے الزام عائد کیا تھا کہ کسٹم افسر اعجاز چوہدری کے قتل کا سب سے زیادہ فائدہ ماڈل ایان علی کو پہنچا ہے  اور  انکے  شوہر  کے  قتل  کے  پیچھے  ماڈل  کا  ہی  ہاتھ  ہے۔

سابق صدرپرویز مشرف کی میڈیا کوآرڈینیٹر  اور  ادکارہ  عتیقہ اوڈھو سے اسلام آباد ایئر پورٹ پر دوبوتل غیرملکی شراب برآمد ہوئی تھی تاہم انہیں کارروائی کیئے بغیر چھوڑدیا گیا تھا۔ اس  واقعے     کا چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری نے از خود نوٹس لیا  تھا  ۔ عدالت عظمٰی ہی کے حکم پر تھانہ ائیرپورٹ پولیس نے جون 2011ءمیں  انکے  خلاف مقدمہ درج کیا تھا۔

ان  کے  علاوہ  بھی  دو غیر ملکی خواتین کو غیر ملکی کرنسی سمگل کرنے کے مقدمات میں گرفتار کیا گیا لیکن ایک ہفتے کے دوران اُن کی ضمانت ہوگئی تھی۔

تاریخ  تو  یہی  بتاتی  ہے  کہ  پاکستان  میں  حسینائیں  اسمگلنگ  اور  منی  لانڈرنگ  کیسز  میں  اپنے  آقاؤں  کی  پشت  پناہی  کی  بدولت  باآسانی  بری  ہوجاتی  ہیں ، بلکہ  کتنی  تو  ایسی  ہوتی  ہیں  جنھیں  پکڑنے  کی  ہمت  کسٹم  اہلکار  کرتے  ہی  نہیں  اور  اگر  کوئی  کرے  تو  اسکا  انجام  بھی  کسٹم  انسپکٹر  اعجاز  چوہدری  جیسا  ہی  ہوتا  ہے۔

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *