5 25 808x454

سکھر: زبردستی شادی سے انکار پر ہندو لڑکی بے رحمی سے قتل

169 views

ظلم و ستم کی آخری حد نے بھی حد کردی سکھر میں زبرستی شادی سے انکار پر ہندو لڑکی بے رحمی سے قتل۔

صبحین عماد

بس سائیں سرکار سلامت رہے اس اندھے بہروں کی بستی میں
جہاں بیٹیاں مار دی جاتی ہیں مگر بھٹو آج بھی زندہ ہے۔

کبھی ننھے بچوں سے زیادتی کے واقعات تو کبھی بیٹا پیدا نہ ہونے پر ننھی بچی کا بے رحمی سے قتل یہ وہ خبریں ہیں جوسننے والے کے دل کو ایک لمحے میں مٹھی میں لے لیتی ہیں اور یہ سب واقعات کہیں اور نہیں بلکہ اسی ملک میں ہورہے ہیں جسے ریاست مدینہ اور بھٹو کا پاکستان بنانے کے خواب ہر حکمران نے بے بس عوام کو دکھا رکھے ہیں پر کیا ہی کہیں کہ شرم تم کو مگر نہیں آتی

افسوس در افسوس کہ ہم دوسروں پر انگلیاں اٹھاتے ہیں اقلیتوں کے حقوق کے نعرے لگاتے ہیں لیکن وہیں پاکستان میں اب اقلیتوں پر مظالم کی زنجیر ٹوٹنے کا نام نہیں لے رہی ہے اب ایک اور واقعہ سامنے آیا ہے جس نے بے حسی اور سفاکیت کی ساری ہی حدوں کو پار کرلیا ہے۔

پاکستان کے ضلع سکھر کی پولیس کے مطابق روہڑی کے قریب 16 سالہ ہندو لڑکی پوجا کماری کو چند ملزمان نے گھر میں گھس کر مبینہ طور پر اغوا کرنے کی کوشش کی اور مزاحمت کرنے پر گولیاں مار کر ہلاک کر دیا ہے۔

پولیس کے مطابق یہ واقعہ روہڑی کے قریب پٹنی تھانہ کی حدود میں واقع چھوہارا منڈی کے قریب پیش آیا ہے۔ سینیئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (ایس ایس پی) سکھر سنگھار ملک نے پیر کی شام سکھر میں مقامی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ پوجا کماری کو قتل کرنے والے مرکزی ملزم واحد بخش لاشاری کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور آلہ قتل بھی پولیس نے برآمد کر لیا ہے۔

ملزم واحد بخش نے مقتولہ پوجا کماری سے شادی کرنے کے لیے انہیں اغوا کرنا چاہتا تھا۔ ان کے مطابق اسی مقصد سے ملزم مقتولہ کے گھر میں گھسا، مگر مقتولہ نے ملزم کے ساتھ جانے سے انکار کرتے ہوئے مزاحمت کی، جس پر ملزم نے لڑکی کے سر میں گولیاں مار کر قتل کر دیا۔

واقعے کے بعد ورثا نے مقتولہ پوجا کماری کی لاش قومی شاہراہ پر رکھ کر دھرنا دیا اور اپنے نا کردہ گناہ اوراور انصاف کا جواب مانگا ہم اقلیتوں کے حقوق ی بات تو کرتے ہین مگر ہم انھیں انسان تک سمجھنے کو تیار نہیں ،

مقتولہ پوجا کماری کے والد صاحب اوڈ نے بتایا کہ سندھ میں نوجوان ہندو لڑکیوں کو اغوا کرکے زبردستی مذہب تبدیل کرانے کے متعدد واقعات ہوتے رہتے ہیں، مگر یہ کہا جاتا ہے کہ ہندو لڑکیاں اپنی مرضی سے مذہب تبدیل کرکے کسی مسلمان لڑکے سے شادی کرلیتی ہیں۔

باپپ نے بھاری دل اور نم آنکھوں سے یہی کہا کہ آج میری بیٹی پوجا کماری نے گھر میں گھس کر اغوا کرنے والے ملزم کو نہ صرف انکار کیا مگر مزاحمت بھی کی۔ اب تو مان لیں کہ ہندو لڑکیوں کو زبردستی مذہب تبدیل کرانے کے لیے اغوا کیا جاتا ہے آکر کب تک اپنے گناہ دوسروں کے سر ڈالنے کا یہ رواج چلتا رہے گا آخر کب تک اور کتنی پوجا کو اپنی جان دے کر یہ یقین دلانا ہوگا کہ بے قصور اور بے گناہ تھیں ۔

صاحب اوڈ کے مطابق ملزم کئی ماہ سے ان کی بیٹی کو تنگ کر رہا تھا۔کئی بار گھر میں گھس آیا، جس پر پولیس کو درخواست دے کر تحفظ دینے کا کہا گیا، مگر سکھر پولیس نے  وہی کیا جس کا یقین تھا پھر کسی نئ حادثے کے لیے پولیس نے اس درخواست پر کوئی کارروائی نہیں کی۔

پوجا کے والد کا کہنا تھا کہ اگر سکھر پولیس میری درخواست پر کارروائی کرتی تو آج میری بیٹی قتل نہ ہوتی۔ جب بھی کسی ہندو لڑکی کے ساتھ کوئی واقعہ پیش آتا ہے تو پولیس کا رویہ غیر ذمہ دارانہ ہوتا ہے، جس کا ہمیشہ دکھ رہے گا۔ اس سلسلے میں ایس ایس پی سکھر سنگھار ملک سے رابطہ کیا گیا، مگر انہوں نے اس واقعے پر تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا

اندھوں بہروں کی نگری میں یوں کون توجہ کرتا ہے
ماحول سنے گا دیکھے گا جس وقت بجیں گی زنجیریں
جو زنجیروں سے باہر ہیں آزاد انہیں بھی مت سمجھو
جب ہاتھ کٹیں گے ظالم کے اس وقت کٹیں گی زنجیریں

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *