Pakistan14August 808x454

جشن آزادی پاکستان کو 75 سال مبارک

181 views

14اگست کا دن تمام پاکستانیوں کے لیے ایک خاص اہمیت کا حامل اور حب الوطنی کا جذبے سے بھرپور ایک خاص دن ہوتا ہے ۔

ایک ایسا دن جس کا بچوں اور نوجوانوں کوعید کے دن کی طرح ہی انتظار ہوتا ہے۔ گھروں ، چھتوں ، گاڑیوں ، موٹر سائیکلوں کو لوگ  ایسے سجانا شروع کر دیتے ہیں جیسے اگر گھر گلی محلوں کو نہ سجایا تو جشن ادھورا رہ جائیگا ۔ بچوں کے اسکولوں کالجوں وغیرہ میں بھی ایک مہینہ پہلے ہی فنکشن کی تیاریاں زورو شور سے شروع ہوجاتی ہیں اور 14 اگست والے دن ایک خاص پروگرام کا انعقاد کیا جاتا ہے۔

مملکت خداد پاکستان کا 75 واں یوم آزادی آج اس عزم کی تجدید کے ساتھ منایا جارہا ہے کہ پاک سر زمین کی ترقی اور خوشحالی کو یقینی بنانے کے لیے ہر ممکن کوشش کی جائے گی ۔

جشن آزادی کی تقریبات کا آغاز صبح سویرے اسلام  آباد سمیت چاروں صوبائی دارالحکومتوں میں  توپوں کی سلامی سے کیا جاتا ہے یہ بھی ایک سحر انگیز نظارہ ہوتا ہے

جشن آزادی سے ایک دن پہلے کی تو 13 اگست کی رات تو جیسے عید سے پہلے چاند رات کے ہنگامے کی طرح ہوتی ہے ہر طرف سبزہلالی پرچموں کی بہارنظر آتی ہے ،ہر طرف قومی جھنڈوں کی بھرمار ہوتی ہے ہر سائز اور خوبصورت جھنڈوں کے اسٹالز سے شہر کی تمام ہی سڑکیں بھری ہوتی ہیں ۔

13 اگست کی رات شہر شہر گلی گلی ہر ایک محلے میں بچوں کی بھرپور کوشش ہوتی ہے کہ ساری ہی سجاوٹ مکمل کرلی  جائے ہر طرف پرچموں کا میلہ اور ہر ایک چہرے پر یہ خوشی کا ڈیرا اس بات کی گواہی دیتا ہے کہ یہ کوئی عام دن نہیں ۔

14 اگست کی تیاروں میں ہر طرف  بس ایک ہی شور سنائی دیتا ہے کہ  ہے کہ جلدی سے آٹے کی لئی لے آؤ ابھی اورجھنڈیاں لگانی ہیں ابھی تو گلی میں برقی قممیں بھی جلانی ہیں۔

ارے دیکھو سامنے گلی میں سب سے بڑا جھنڈا لگایا ہے وہ دیکھو اس نے گھر کو دیوں سے سجایا ہے یہ ہر ایک پاکستانی کی دل کی خوشی ہوتی ہے اپنے ملک پاکستان کو حاصل کر لینے کی خوشی ۔

 13 اگست کی شام کو موٹر سائیکلوں اور گاڑیوں پرمنچلوں کے ٹولے بھی بھرپور تیاری سے نکلتے ہیں اور شہر بھر کی سڑکوں پر شور و غل مچاتے پھرتے ہیں۔ ان کے ہاتھوں میں بے ڈھنگی آواز نکالنے والے باجے ہوتے جو ناجانے کس نے ایجاد کیے ہیں.

لیکن کچھ سالوں سے یہ بھی جشن آزادی منانے کا ایک اہم حصہ بن گیا ہے ہر بچے کے ہاتھ میں یہ باجا ہونا بھی جیسے لازم ہوگیا ہے چہروں پر سفید اور سبز پینٹ  کیے یہ منچلے بھی اپنی ہی مستی میں مگن نظر آتے ہیں ، کسی کے کاندھوں پر بندھا پرچم بھی نظر آئے گا تو کسی نے اپنی گاڑی کو ہی جھنڈوں سے سجایا ہوتا ہے ۔ یہ  بھی ایک الگ ہی انداز ہے ہماری آزادی منانے  کا.

پاکستان کے چپے چپے اور گوشے گوشے میں ہر گھر کی چھت پر سبز ہلالی پرچم لہرا رہے ہیں،نہ صرف گھروں کی چھتوں پر بلکہ بائیسکل‘ موٹرسائیکل، رکشاوں ,گاڑیوں اور ہیوی ٹرانسپورٹ پربھی سبز ہلالی پرچم لہرا تے دکھائی دے رہے ہیں.

جبکہ سرکاری و غیر سرکاری عمارتوں پر بھی چراغاں اپنے عروج پر ہے اور کیوں نہ ہو یہ دن کوئی عام دن نہیں یہ تہوار کوئی عام تہوار نہیں بلکہ یہ تو دن ہے آزادی کا اپنے وجود کو حاصل کرنے کا خود کو دنیا کے سامنے منوا لینے کا یہ دن ہے پاکستان کے آزاد ہونے کا یہ دن ہے اپنے ملک اپنے جان سے پیارے وطن کو پانے کا.

ہر سال جب 14 اگست کا سورج طلوع ہوتا ہے اس دن چھت کا نظارہ قابل دید ہوتا ہے۔ ہوا تیز ہو یا آہستہ پرچم بھی لہرا کر خوشی کا اظہار کرتے ہیں۔ بچے والدین سے پرچم خریدنے کی ضد کرتے ہیں اور یہ بھی شرط عائد کر دی جاتی ہے کہ ان کے پرچم کا سائز سب سے بڑا ہونا چاہئے۔

 قوم کو اپنا 75 واں  جشن آزادی مبارک ہو  یہی دعا  ہے کہ ہر دل عزیز پاکستان اور ترقی اور خوشحالی کا سفر طے کرے اور دشمن کی بری نظر سے ہمیشہ محفوط رہے۔

تو سلامت رہے تا قیامت پیارے وطن آمین ۔

پاکستان زندہ باد

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *