SUKKURMOTORWAY SCANDAL 808x454

سندھ کے سرکاری افسران کا بڑا مالیاتی اسیکنڈل موٹروے فنڈ میں اربوں کا گھپلا

90 views

 سندھ کے سرکاری افسران کا ایک بڑا  مالیاتی اسیکنڈل سامنے آیا ہے جہاں مبینہ طور پر ڈپٹی کمشنر مٹیاری عدنان رشید  اور ڈپٹی کمشنرسعید آباد کے اسسٹنٹ کمشنر منصور عباسی نے لینڈ ایکوزیشن آفیسر کے اختیارات کا ناجائز استعمال  کرتے ہوئے سکھر-حیدرآباد موٹر وے کی تعمیر کے لیے مختص رقم میں سے 2 ارب 10 کروڑ کا گھپلا کیا ہے ۔

واضح رہے کہ  سکھر-حیدرآباد موٹر وے (، M-6) کی کل لمبائی 304 کلومیٹر ہے، جس میں سے 70 کلومیٹر ضلع مٹیاری کے تین تعلقوں (سیدا آباد- ہالا- مٹیاری) سے گزرتا ہے۔

دستاویزات کے مطابق نیشنل ہائی وے اتھارٹی (این ایچ اے) نے 2 ارب 70 کروڑ روپے سندھ بینک کے اکاؤنٹ میں ڈی سی مٹیاری لینڈ ایکوزیشن’ کے نام سے جمع کرائے تھے۔

 17 اکتوبر سے 11 نومبر کے درمیان اسسٹنٹ کمشنر منصور عباسی جو کہ ایکیوزیشن افسر بھی تھے نے مختلف چیکس کے ذریعے 2 ارب 14 کروڑ روپے نکلوائے، تاہم نکالی گئی رقم کہاں گئی اس کا تاحال کوئی سراغ نہیں ملا۔

رپورٹس کے مطابق؛ سندھ بینک اکاؤنٹس نمبر سے (سکھر-حیدرآباد موٹروے M6 کی NHA اراضی کے حصول کی رقم) سے 1.82 بلین روپے کی نقد رقم نکلوائی گئی۔ 0415-577693-6100 اور اکاؤنٹ نمبر۔ 0415-647639-1001 بذریعہ ڈپٹی کمشنر مٹیاری

ابتدائی طور پر موصول ہونے والی رقم بینک الحبیب میں جمع کرائی گئی اور سندھ حکومت کی ہدایات کے بعد تمام رقم 4092669833 سندھ بینک اکاؤنٹ نمبر میں جمع کرائی گئی۔ 0415-577693-6100 تاریخ (ڈیلی پروڈکٹ سیونگ اکاؤنٹ)

حیرت انگیز طور پر اکتوبر 2022 کو سندھ بینک میں ایک نیا اکاؤنٹ کھولا گیا اور تمام رقم اکاؤنٹ نمبر 0415-647639-1001 ٹائٹل لینڈ ایکوزیشن آفیسر مٹیاری میں منتقل کردی گئی۔

ڈی سی مٹیاری عدنان رشید، نے اکاؤنٹ نمبر 0415-647639-10039th سے 1.82 بلین روپے کی نقد رقم نکالی ہے۔ جبکہ 17 اکتوبر سے 25 اکتوبر 2022 تک۔ تمام نقد رقم ان میں شیئر کی

محمد عدنان رشید ڈپٹی کمشنر مٹیاری نے نے لینڈ ایکوزیشن آفیسر کے اختیارات کا ناجائز استعمال کرتے ہوئے بڑی کرپشن کی ہے۔ سندھ بینک اکاؤنٹ نمبر سے غیر قانونی ادائیگی 0415-577693-6100 اور اکاؤنٹ نمبر۔ 0415-647639-1001، جو ڈپٹی ڈائریکٹر (لینڈ)/ ZLO (S-Z) NHA کراچی سے چیک نمبر 77064 کے ذریعے موصول ہوئے تھے۔

خیال رہے کہ ڈی سی مٹیاری عدنان رشید نے اسلم پیرزادہ کورڈینسٹر مخدوم جمیل زمان، میر مسرت جیفری کوآرڈینسٹر مخدوم محبوب زمان ایم پی اے سندھ، میر محمد سہاگ بینک منیجر اور سید جوڑیل شاہ اکاؤنٹنٹ ڈی سی آفس مٹیاری کی ملی بھگت سے اکاؤنٹ نمبر 0415-647639-1001 سے 1.82 بلین روپے کیش میں جبکہ 391 چیکس کے ذریعے نکالے گئے اور ان کی طرف سے 55 کروڑ شیئر عدنان رشید، 50 کروڑ شیئر اسلم پیرزادہ، 50 کروڑ شیئر میر مسرت، 20 کروڑ شیئر میر محمد سہاگ بینک منیجر اور جوڑیل شاہ اکاؤنٹنٹ کا 7 کروڑ کا حصہ ہے.۔

حیرت انگیز ہے کہ سیکشن 6 کی اجازت سے تعلقہ مٹیاری اور سید آباد اے سی کو لینڈ ایکوزیشن آفیسر قرار دیا گیا ہے۔

ڈپٹی کمشنر مٹیاری اور اسسٹنٹ کمشنر سعید آباد زمین کے حصول کی کارروائی سے متعلق صرف جزوی ریکارڈ فراہم کر سکے جس میں نیشنل ہائی وے اتھارٹی سے خط و کتابت اور ادائیگیوں کا ریکارڈ بھی شامل ہے، جب کہ زمین کے حصول کے لیے معاوضے کی ادائیگی کا ریکارڈ دستیاب نہیں ہے۔

اسکینڈل نے متعلقہ بینک کی کارکردگی پر بھی سوالیہ اٹھادیے ہیں، حکام کا کہنا ہے کہ زمین کے حصول کے لیے رقم کی ادائیگی کے لیے کبھی بھی نقد لین دین نہیں کیا جاتا۔

سرکاری عہدیدار کے مطابق اس طرح کی ادائیگیوں کے لیے پے آرڈرز، ڈیمانڈ ڈرافٹ یا کراس چیک جیسے طریقے استعمال کیے جاتے ہیں۔

سندھ حکومت نے معاملے کو دیکھنے کے لیے 13 نومبر کو 2 رکنی فیکٹ فائنڈنگ کمیٹی تشکیل دی تھی، دو رکنی فیکٹ فائنڈنگ تحقیقات کے لیے جب بینک کی برانچ پہنچی تو منیجر چھٹی پر تھا۔

جبکہ دوسری جانب  ذرائع کے مطابق  نیشنل ہائی وے اتھارٹی نے ڈی سی نوشہرو فیروز کو 1500 ایکڑ زمین کی خریداری کے لیے 3 ارب 61 کروڑ روپے سے زائد کے فنڈز جاری کیے ، جاری کردہ فنڈ کے استعمال میں قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی کی گئی۔

 ڈپٹی کمشنر نوشہرو فیروز تاشفین عالم گزشتہ 4 روز سے غائب ہیں  جس پر انہیں معطل کردیا گیا ہے۔

چیف سیکرٹری سندھ کا کہنا ہے کہ انکوائری کے لیے تین رکنی کمیٹی بنا دی ، جس کی رپورٹ آنے کے بعد پتا چلے گا کرپشن کیسے کی گئی

مصنف کے بارے میں

راوا ڈیسک

راوا آن لائن نیوز پورٹل ہے جو تازہ ترین خبروں، تبصروں، تجزیوں سمیت پاکستان اور دنیا بھر میں روزانہ ہونے والے واقعات پر مشتمل ہے

Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Your email address will not be published. Required fields are marked *